Tuesday, 30 December 2014

عدلیہ رجمنٹ وفاداری کی بے مثال تاریخ **تحریر: صفی الدین اعوان

عدلیہ رجمنٹ وفاداری کی بے مثال تاریخ **تحریر: صفی الدین اعوان
پاکستان میں جو عدالتی نظام موجود ہے اس میں شہریوں کی شمولیت بزریعہ جیوری نہیں ہے یہی وجہ ہے کہ فرد
واحد کو "من مانے" فیصلے کرنے کا مکمل اختیار حاصل ہے۔ اصولی طور پر یہ ملٹری عدالتیں ہی ہیں جن کو سویلین  ناکامی سےچلانے کی کامیاب  کوشش کررہے ہیں موجودہ عدالتوں کو مزاج کے اعتبار سےاگر ملٹری عدالتیں تصور کرلیا جائے تو مزید نئی ملٹری عدالتوں کے قیام کی تجویز احمکانہ (کتے والے کاف کے ساتھ احمقانہ )ہے جنرل راحیل شریف یہ نیک کام موجودہ ملٹری عدالتوں سے بھی لے سکتے ہیں اس کا طریقہ کار یہ ہے کہ  ماضی کی طرح انسداد دہشتگردی کی عدالتیں شہر سے دور دراز بنا دی جائیں اور ہمیشہ کی طرح نظر نہ آنے والے فوجی ڈنڈا سر پر مسلط کردیا جائے جب میاں نواز شریف خان عمران خان زرداری وغیرہ ایک اشارے پر ڈھیر ہوسکتے ہیں تو لیڈرشپ کی صلاحیت سے پیدائیشی طور پر محروم عدلیہ میں اتنی جراءت کہاں کہ انکار کرسکے جنرل صاحب موجودہ عدلیہ کو ہی ملٹری کورٹس ہی تصور کرکے جو کام لینا ہے لے لیں موجودہ ملٹری عدالتوں کی موجودگی میں نئی ملٹری عدالتوں کی سول سوسائٹی سخت مزمت کرے گی ویسے بھی اس مونچھوں والے فوجی جنرل میں ایسی کوئی خاص بات ضرور ہے کہ جب مونچھوں پر ہاتھ پھیرتا ہے تو سیاستدانوں کی ڈر کے مارے "پشی" ہی نکل جاتی ہے
راحیل شریف صاحب یہ نالائق وکیل قسم مشیر آپ کا ٹائم برباد کررہے ہیں  یہی وہی لوگ ہیں جنہوں نے مشرف کی لٹیا ڈبو ڈالی تھی آپ موجودہ عدلیہ کی  فوجی بٹالین کی حیثیت کو بحال کردیں
چیف جی یقین کریں یہ بہت ہی وفادار بٹالین ہے اور بطور فوجی بٹالین کے "عدلیہ رجمنٹ " کا ماضی شاندار ہے کیا آپ کے فوجی مارشل لاء کی جان پر کھیل کر عدلیہ رجمنٹ نے ہمیشہ حفاظت نہیں کی کیا ایوب سے لیکر مشرف تک کے عدلیہ رجمنٹ کے کردار اور قربانی کو آپ ہمیشہ کیلئے بھول گئے ہیں
لیکن باغی بریگیڈیئر افتخار چوہدری کے معاملے میں کچھ قصور اندر کے لوگوں کا بھی ہوگا اس لیئے آپ کو "منجی " کے نیچے "ڈانگ" پھیر کر بھی دیکھ لینا چاہیئے اور باغی بریگیڈیر افتخار کی پرانی خدمات کو یاد کرکے یہ بھی سوچنا چاہیئے کہ اگر بلاوجہ بریگیڈئر صاحب کا کورٹ مارشل نہ کیا جاتا تو پوری بٹالین کو بغاوت کی ضرورت ہی کیا تھی اس لیئے مؤدبانہ گزارش ہے کہ  پرانی خدمات کو یاد کرکے پورے وقار کے ساتھ عدلیہ رجمنٹ کو بحال کردیا جائے اور اگر ممکن ہوتو چیف کو بریگیڈئر کے عہدے سے ڈبل پروموشن دے کر اگر برابری کی بنیاد پر جنرل بنادیا جائے تو عدلیہ رجمنٹ کی کارکردگی مزید بہتر ہوگی ویسے بھی آنے والے دنوں میں  جب آپ میاں صاحب کو پکی چھٹی پر بھیجنے ہی والے ہیں تو ماڈل ٹاؤن والے کیس کے حوالے سے عدلیہ رجمنٹ کا کردار اہم ہوگا

Saturday, 27 December 2014

دس لاکھ متحرک شہری تحریر صفی الدین اعوان



معزز شہریوں کی شمولیت کے بغیر عدالتی نظام نامکمل ہے یہی وجہ ہے کہ عدلیہ اور پولیس نے مل کر 20 کروڑ پاکستانی شہریوں کو عملی طور پر یرغمال بنارکھا ہے پولیس شہریوں پر تشدد کرتی ہے لوٹ مار کرتی ہے اور اس تمام لوٹ مار میں عدلیہ کا حصہ شامل ہوتا ہے کیونکہ جیوری کے زریعے شہری عدالتی نظام کا حصہ نہیں ہیں اس لیئے عدلیہ اور پولیس نے مل کر اور ایک منظم پارٹنرشپ کے تحت لوٹ مار کا بازار گرم کررکھا ہے دوسری طرف عوام کے پیسوں سے چلنے والے اداروں کو کرپشن کیلئے اس عدلیہ کی مکمل حمایت حاصل ہے جس کا حصہ پاکستانی شہری نہیں ہیں یہی وجہ ہے کہ پاکستانی شہری حقوق سے محروم ہیں معزز شہریوں پر مشتمل عدالتی جیوری پاکستانی شہریوں کا حق ہے 
صوبہ سندھ میں سی پی ایل سی شہری شمولیت کی بہترین مثال ہے سٹیزن پولیس لائژن کمیٹی نے کراچی کے شہریوں کو پولیس کے مظالم سے بچانے کی شاندار کوشش کی ہے
شہریوں کی عدالتی نظام میں شمولیت بزریعہ جیوری اور سوشل میڈیا پر متحرک شہری رضاکار صحافیوں اور پاکستانی شہریوں کیلئے دس لاکھ متحرک شہریوں کی ممبر سازی کی مہم سانحہ پشاور کی وجہ سے ملتوی کردی گئی تھی کیونکہ یہ ایک اہم ترین پروجییکٹ ہے اس لیئے انشاءاللہ سال نو کے موقع پر یکم جنوری 2015 سے اس ملک گیر مہم کا آغاز ہوگا
اس حوالے سے جو بنیادی پلیٹ فارم تشکیل دیا گیا ہے وہ سوشل میڈیا پریس کلب کا ہے جس کی مکمل تفصیلات آج ایک تفصیلی نوٹ کے زریعے فراہم کردی گئی ہیں ہم پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں کے شکرگزار ہیں جنہوں نے اس پروجیکٹ کیلئے ہمیں ہرممکن سہولت فراہم کی ہے

MEMBERSHIP P START FROM DATED 1st January 2015

What is one “1 Million Active Citizen” and what’s the need of it?

The Law Society Pakistan has always worked for the betterment of society and rule of law. Considering the advantages of citizen journalism and growing trends of latest technologies in our society TLSP sensed a high need to build a proper channel of citizen journalism where this trend can be use for providing a platform to public. But considering the criticism over citizen journalism TLSP took an initiative towards the project of “1 million active citizen” where 1 million people will be trained for citizen journalism. These trainings will focus on skills needed for citizen journalism. Special focus will be on ethical guideline. The motto of 1 million active citizens is if you see something say something. Report any human rights violation without fear and favor. All news and information gather by citizen journalists will be review by committee before publishing on social media. Based on those clips/snaps/videos suits will file in respective courts 

Criteria:
Following people are eligible for memberships and trainings:
  • Pakistani citizens Age 18 years or aboveMinimum qualification matriculation
  •  No criminal record
  • Memberships is based on
  • Annual 
  • Lifetime 
  • Members will have a right to elect board members via vote.
  • Initially for 3 months temporary committee will run.



What is Citizen Journalism? “
Citizens playing an active role in the process of collecting, reporting, analyzing, and disseminating news and information

”Citizen Journalism is a concept in which public plays the role of journalist in gathering news and information by utilizing latest technology tools and distributing it on internet. Citizen journalists are not trained and non-professionals, who collect, disseminate and analyze news on blogs, wikis and sharing websites using tablets, laptops, cell phones, digital cameras and other mobile and wireless technologies. Anyone can be a citizen journalist and capture/report news. The idea behind citizen journalism is that people without professional journalism training can use the tools of modern technology and the global distribution of the Internet to create, augment or fact-check media on their own or in collaboration with others. For example, you might write about a city council meeting on your blog or in an online forum. Or you could fact-check a newspaper article from the mainstream media and point out factual errors or bias on your blog. Or you might snap a digital photo of a newsworthy event happening in your town and post it online. Or you might videotape a similar event and post it on a site such as YouTube.

What tools are needed by Citizen Journalists? 

Tablet or laptop
computer Digital camera that shoots stills and video Digital audio recorder
 Software apps for editing text, audio, photos and video, and for creating visual data graphics 
Blog, wiki, website or other content management system for texts, audio, photos, video and graphics
Social networks for staying connected 

What skills are needed by citizen journalists? 
  • Critical thinking, proactive curiosity, noticing critical details, piecing facts together, understanding of behavior 
  •  Writing with accuracy, clarity, relevance, brevity, readability, consistency 
  •  Editing and revising for accuracy, clarity, relevance, brevity, readability, consistency 
  •  An eye and ear for still and motion images, informative graphics, natural sounds, layout, design 
  • Visual storytelling, visualization of data, visual design and presentation 
  • Competency with new digital media and internet tools, social media, crowdsourcing and participation 

What is good about citizen journalism?
The good thing about citizen journalism is latest media technologies, social networks, media-sharing websites and the increasing presence of smart phones everywhere open news reporting to people who sometimes can discover and report breaking news faster and less expensively than mainstream news organizations.It adds a wider berth and color as it collates information that would not have been placed into the public eye otherwise. This can be through a poll, blog or comment, this gives a story a multifaceted view rather than that of the journalist who wrote it.Citizen journalist cover the news that mainstream media misses. It gives a “multiplicity of voices”. Social media as a form of citizen journalism is seen as an aid for journalism by many despite its’ downfalls due to the way it breaks news through trending topics and collating all the news in one ideal location. Due to this, it has created a greater interest in news through online discussion and the spreading need to share information with others, as it is stated“Most people are still happy to rely on mainstream news organisations to sort fact from fiction and serve up a filtered view, but they are increasingly engaged by this information, particularly when recommended by friends or another trusted source”Social media is enabling a powerful form of citizen journalism with live coverage of events that allow bursts of information as it is happening.

Criticism:
Citizen journalism has been criticized by professional journalists because citizen journalists have not been oriented toward the standards and practices of professional journalism. They say reports from citizen journalists are subjective, amateurish, inaccurate and haphazard. They see citizen journalism's quality as, well, not professional and its coverage spotty.  The issue with citizen journalism is the professionalism of it but as it depends on the person and believes it is an issue with professional journalists too. It is argued that for a good story a journalist needs the skills they could only acquire with training however that is not to say that an ordinary person is not capable of objectively telling us the story. For many, citizen journalism isn’t even an attempt at bettering the media, but simply aiding it to report to the mass media or just to get their opinion out on a public scale and as this is the case it makes the material a good read but also one that is looked at with a great skepticism as a big problem with it seems to be checking the facts. Like usually citizen journalists record an event and present it to the public, very often without checking all the facts related to the event.Many will look at citizen journalism as lacking the ethical and professional legitimacy of professional as it is stated “this legitimacy may be unknown with a blog or user-created site and,indeed, there have been cases where individuals have gamed the system, deliberately posting material they know not to be true”The thing about social media and Twitter is there is a flow of false be it the deaths of numerous celebrities, which can be so easily taken in by the mainstream media hoping to break the story first.

Friday, 5 December 2014

کرپشن کو کرپشن سے ہی ختم کیا جاسکتا ہے ٭٭ تحریر صفی الدین اعوان

افتخار چوہدری چلاگیا
اس نے چائے کی ایک پیالی میں  طوفان برپا کیا اور وہ طوفان چائے کی پیالی کے ساتھ ہی ختم ہوگیا
افتخار چوہدری عدلیہ کی عزت بنانے میں کامیاب رہا۔ اس کی قسمت ہمیشہ سے اچھی ہے۔ وہ جب وکیل تھا تو اس وقت بھی وہ ایک قابل رشک زندگی گزارتا تھا۔ان کے ایک پرانے دوست نے بتایا کہ ایک دفعہ ان کے ساتھ کوئٹہ سے سبی جانے کا اتفاق ہوا ۔ایک ہوٹل پر کھانے کیلئے رکے تو بلاتکلف ویٹر کو کہا کہ ہوٹل میں جتنی بھی ڈشیں پکی ہیں ایک ایک پلیٹ لے آؤ کھانا کھایا اور بھاری بل اداکیا راستے میں پوچھا کہ   ایسا کیوں کیا چوہدری نے جواب دیا کہ ہوٹل والے کو پتہ ہونا چاہیئے کہ ایک وکیل اور عام آدمی کے کھانے میں کیا فرق ہوتا ہے افتخار چوہدری  نے وکالت بھی شان سے کی اور ججی بھی شان سے کی
وہ ہرلحاظ سے ایک قابل رشک وکیل تھا۔  لوگ اس کی وکالت کی آج بھی مثال دیتے ہیں وہ فرشتہ نہ تھا نہ  ہی اس نے کبھی دعوٰی کیا
اس کو چیف جسٹس بنانے سے پہلے جسٹس سعیدالزمان کی زندگی میں نو مارچ خاموشی سے آکر گزر بھی چکاتھا اور ہماری بار ایسوسی ایشنز  نے چپ کا روزہ رکھ لیا تھا جب جسٹس سعیدالزمان کو عدلیہ سے بے دخل کیا گیا تو اس وقت بھی سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن موجود تھی اس وقت بھی پاکستان بارکونسل کا وجود ہواکرتا تھا وکلاء کی تمام تنظیمیں موجود تھیں  لاہور کی عدالتوں میں بھی وکیل پریکٹس کرتے تھے اور کراچی میں بھی وکالت ہوتی تھی اس وقت بھی  پاکستان کے ہر ضلعے میں منتخب بار ایسوسی ایشنز ہواکرتی تھیں  لیکن اس وقت مشرف نامی ڈکٹیٹر کے ہاتھ سے حلف لینا کوئی اخلاقی جرم نہ تھا شاید یہ سب تاریکی کے دور کی باتیں تھیں   شاید حبیب جالب اسی وجہ  کسی گزرے زمانے  میں یہ کہنے پر مجبور ہوگئے تھے کہ
یہ منصف بھی تو قیدی ہیں۔۔۔ ہمیں انصاف کیا دیں گے
پھر وقت نے کروٹ لی شاید اس آرمی چیف سے  اس کا اپنا ادارہ ہی بیزار ہوگیا تھا جو کسی طور وردی اتارنے پر تیار ہی نہیں ہورہا تھا  
پھر نو مارچ دوہزار سات آگیا وقت کروٹ لے چکا تھا افتخار چوہدری کے اچھے دن شروع ہوئے ایک "نامعلوم طاقت "اس کے ساتھ تھی  وہ طاقت اس قدر طاقتور تھی کہ ایک حاضر آرمی چیف اس کے سامنے "بے بسی" کی تصویر بن گیا اسی دوران  وکلاء سڑکوں پر تھے اسی دوران ایک  عام پولیس افسر نے چیف جسٹس آف پاکستان کو  ڈرامائی  انداز میں بالوں سے پکڑ کر اس کا راستہ روک دیا اس واقعے  نے جلتی پر تیل کاکام کیا اور وکلاء تحریک آگ کی طرح بھڑک اٹھی تحریک کا اصلی ہیرو وہی پولیس افسر تھا جس نے چیف جسٹس کو بالوں سے پکڑا تھا وہ آج بھی سیٹ پر موجود ہے
وہ پاکستان بار کونسل وہ صوبائی بار کونسلز پاکستان بھر کی ڈسٹرکٹ سطح کی بار ایسوسی ایشنز  جنہوں نے جسٹس سعیدالزمان کے معاملے میں چپ کا روزہ رکھ لیا تھا  یہ تمام لوگ کالے کوٹ پہن کر سڑکوں پر نکل آئے اسی دوران بے شمار لوگ نوازے گئے وہ آج بھی ہمارے ہیرو ہیں
آخر کار وکلاء کی قربانیاں اور نامعلوم طاقت کی غیبی مدد کے زریعے عدلیہ  بحال ہوئی کچھ لوگوں کا یہ کہنا تھا کہ عدلیہ آزاد ہوئی ہے حالانکہ عدلیہ بحال ہوئی تھی
بہرحال جو بھی تھا افتخار چوہدری ایک طاقتور ترین چیف جسٹس آف پاکستان کے طور پر سامنے آئے ان کو بہت اچھا موقع ملا  جس سے چوہدری صاحب نے بھرپور فائدہ بھی اٹھایا
 اسی دوران چوہدری صاحب حکومت کے پیچھے ہی پڑگئے  بلکہ ہاتھ پاؤں دھو کر ہی پڑگئے  جبکہ دوسری طرف ماتحت عدلیہ کیلئے ایک جوڈیشل پالیسی متعارف کروادی اسی دوران مجھ سمیت پاکستان کے  ایک لاکھ وکلاء کو یہ غلط فہمی ہوگئی کہ عدلیہ واقعی آزاد ہوگئی ہے لیکن ایک طاقتور ہاتھ اس کے پیچھے ہمیشہ موجود رہا  چوہدری بھی یاروں کا یار تھا  اسی دوران وہ اپنے دوستوں کو نوازنے میں کامیاب رہا دوستی کا حق ادا کردیا۔ عوام کو کسی حد تک ریلیف ملا کافی معاملات میں حکومت پاکستان کا پیسہ واپس حکومتی خزانے میں آیا   اگرچہ اب تو چوہدری صاحب گھر جاچکے ہیں لیکن وکلاء اور پاکستانی عوام میں عدلیہ ایک امید کی کرن ضرور بن گئی ہے  ایک ماڈل پروجیکٹ کے طور پر ہم یہ جانتے ہیں کہ ایک چیف جسٹس کتنا طاقتور ہوتا ہے  اور اس کا رول انتظامیہ کے احتساب کیلئے کتنا ضروری ہوتا ہے بطور چیف جسٹس چوہدری نے اپنا وہ کردار نبھایا جو ہم فلموں اور ڈراموں میں سوچ بھی نہیں سکتے وہ غریبوں کا مسیحا بن کر ابھرا غریب اس سے محبت کرتے تھے وہ غریب کی امید تھا لیکن لیکن اسی دوران وہ عدلیہ کو بطور ادارہ متحرک کرنے میں ناکام رہا اس کی جوڈیشل پالیسی بہترین ہونے کے باوجود ناکامی سے دوچار ہوئی اس کے اپنے ہی ادارے میں کرپشن انتہائی تیزی سے پھیلی  عدلیہ کا اندرونی  احتساب کا عمل ختم ہوگیا   اس دوران ہم اس غلط فہمی کا شکار ہوگئے کہ عدلیہ آزاد ہوگئی تو اس آزادی ڈرامے کے دوران وکلاء کے مفادات  بھی متاثر ہوئے  عدلیہ کو دیگ اکیلے ہضم کرنے کی گندی عادت ہوگئی
چیف صاحب نے  پاکستان کے تمام اداروں کا احتساب کیا سوائے عدلیہ کے اسی دوران پاکستانی میڈیا کی خصوصی توجہ عدلیہ کی جانب ہوگئی تو وکلاء گردی بھی سامنے آگئی   پھر پورے پاکستان نے دیکھا کہ لاہور میں وکلاء نے ایک سیشن جج کو رگڑا دیا اور بعد میں اس کی حمایت کرنے پر جسٹس شریف  کو بھی رگڑا دیا   اصل بات یہ تھی کہ جسٹس شریف پوری دیگ اکیلے کھانے کے موڈ میں تھا لیکن وکلاء نے اپنا حصہ چھین لیا وکلاء کہہ رہے تھے کہ یا تو کوئی بھی نہیں کھائے گا یا مل جل کر کھائیں گے جبکہ جسٹس شریف کا مؤقف یہ تھا کہ وہ ساری کی ساری دیگ اکیلے ہضم کرے گا خیر جب وکلاء نے یہ دیکھا کہ چوہدری اور اس کے چند وکیل دوست آزاد عدلیہ کی بریانی اکیلے اکیلے کھانے کے موڈ میں ہیں تو انہوں نے زبردستی اپنا حصہ وصول کیا پھر پورے پاکستان نے یہ دیکھا کہ چیف جسٹس بھی وکلاء گردی کے سامنے بے بس رہا اور وکلاء نے اپنا وہ والا حق زبردستی وصول کیا  جو عدلیہ اکیلے ہضم کرنا چاہتی تھی ہم اس اصول پر یقین رکھتے ہیں کہ یا تو کوئی نہیں کھائے گا کرپشن اچھی چیز نہیں ہوتی  لیکن اگر کھائیں گے تو سب مل جل کر کھائیں گے کرپشن کو کرپشن سے  ہی ختم کیا جاسکتا ہے
ایک نوجوان وکیل کو میں اس غلط فہمی سے نکالنا ضروری سمجھتا ہوں کہ آزاد عدلیہ  کچھ نہیں ہوتی یہ سب طاقت اور مفادات کی جنگ ہے  ایک مضبوط بار انصاف کی فراہمی کو یقینی بناتی ہے    اگر بار مضبوط ہے تو یہ کالی شیروانی پہن کر گھومنے والے شاطر بھیڑیئے  اکیلے نہیں کھا سکیں گے اور نوجوان وکلاء کو یہ چاہیئے کہ ان کی شکل پر نہ جائیں یہ تو شکل مومناں اور کرتوت کافراں والی صورتحال ہے
آزاد عدلیہ چائے کی پیالی میں ایک طوفان  تھا جو چائے کی پیالی کے ساتھ ہی ختم ہوچکا ہے  افتخار چوہدری جاچکا ہے اب وہ واپس نہیں آئے گا مفادات کی اس جنگ میں اخلاقیات کوئی چیز نہیں ہوتی جو جتنا طاقتور ہوگا وہ  اتنا ہی فائدہ اٹھانے کی پوزیشن میں ہوگا اور طاقت استعمال کرنے کیلئے ہوتی ہے
عدلیہ کی موجودہ پالیسیاں مکمل طور پر وکلاء دشمن ہیں   لیکن وکلاء کو اپنا حصہ وصول کرنا ہے جوکہ ہمیشہ ہی وکلاء نے طاقت سے وصول کیا ہے عدلیہ کی ایمانداری صرف اور صرف ڈھونگ کے سوا کچھ نہیں مفادات کی جنگ میں اخلاقیات کی کوئی اہمیت نہیں ہوتی
تشدد تو بہت چھوٹی چیز ہے
یہ جو ہماری عدلیہ نے ایم آئی ٹی بنایا ہے اس کا مقصد کرپشن کا خاتمہ ہرگز نہیں ہے یہ بیوقوف بنارہے ہیں  یہ صرف وکلاء  اور عوام کو ب سے بیوقوف بنارہے ہیں  چور ہمیشہ بزدل ہوتا ہے ان  چوروں سے ڈرنے کی ضرورت نہیں ہے ہمیشہ یاد رکھیں ہرروز یاد رکھیں کہ ہم اس قدر طاقتور ہیں کہ ہمارے صدر نے پاکستان کی سب سے طاقتور شخصیت  آرمی چیف کو سرعام للکار کر کہا تھا کہ  "ہمارا ہاتھ ہوگا اور تیرا گریبان ہوگا"
یاد رکھیں

ناتوانوں کے نوالوں پر جھپٹتے ہیں عقاب


Safi  Awan
03343093302


Monday, 1 December 2014

کیا یہ ہتھوڑی کیل ٹھونکنے کے کام آئے گی

ایک بہت ہی خوبصورت باغ میں لوگ قطار کی صورت میں جارہے تھے باغ کے باہر ایک بددماغ قسم کا چوکیدار بھی کھڑا تھا ایک معزز ساشخص وہاں سے گزرا اس نے چوکیدار سے پوچھا کیا میں اندر جاسکتا ہوں کیا مجھے اندر جانے کی اجازت ہے تو بددماغ چوکیدار نے کہا نہیں چپ کرکے یہاں  کھڑا ہوجا وہ بھی کھڑا ہوگیا کافی دیر کھڑا رہا  اور لوگ اس کے سامنے سے گزرتے رہے جب کہ وہ بیوقوفوں کی طرح دیکھتا رہا اسی دوران  اس نے چوکیدار سے کہا کہ آپ ان لوگوں کو کیوں نہیں روک رہے توبددماغ چوکیدار نے جواب دیا کہ کیونکہ ان میں سے کسی نے یہ فضول سوال نہیں کیا کہ وہ باغ کے اندر جاسکتا ہے یا نہیں اپنی طاقت یا اختیارات کے بارے میں سوال کرنا دنیا کا فضول ترین سوال ہے
طاقت دماغ کے اندر موجود ہوتی ہے کتابوں میں جو کچھ لکھا ہوتا ہے اس کی کوئی اہمیت نہیں ہوتی   اب یہ فضول سا سوال لگتا ہے کہ کہ
 کہاں لکھا ہے کہ مجسٹریٹ  کس حد تک  ایک تفتیشی افسر کے سامنے بااختیار ہے اگرچہ اس فضول  سوال کا قانونی  جواب بھی موجود ہے لیکن
جج ہونا ہی ایک نفسیاتی طاقت ہے۔ جج کا مطلب ہی جج ہونا ہے ایک اپنے اختیارات کا تعین کسی کتاب کے ذریعے کیسے کرسکتا ہے کل تک چند عدالتی اختیارات انتظامیہ کے پاس بھی تھے ڈپٹی کمشنر کیا آپ سوچ سکتے ہیں کے ڈپٹی کمشنر کیسے مجسٹریٹ کے اختیارات استعمال کرتا ہوگا کمشنر یا ڈپٹی کمشنر اسقدر بے لگام تھے کہ ہماری سوچ سے بڑھ کر کیونکہ ان کے پاس لیڈرشپ بھی تھی
پورا پاکستان جانتا ہے کہ وکیل کی طاقت کیا ہے یہ سب باتیں کسی بھی کتاب میں لکھی ہوئی نہیں ہیں  بلکہ استعمال کرتے ہیں جو انہوں نے خود ہی طے کرلیا یہی وہ نفسیاتی طاقت تھی جب مشرف نے ایک خود ساختہ سپریم کورٹ کے زریعے اپنی مرضی کا فیصلہ لینے کی کوشش کی تو منیر ملک  نے ایک تاریخی بیان دیا کہ "ہم سپریم کورٹ کو آگ لگا دیں گے"  یہ وہ طاقت تھی جو منیر ملک صاحب کے دماغ کے اندر ہی موجود تھی اور پاکستان کے ذہین ترین وکلاء میں سے ایک ہوتے ہوئے انہوں نے اپنی  طاقت کا اعلان کیا  تشدد کا راستہ اختیار کرنے کا اعلان کیا اسی طرح وہ وکیل جو خود کو وکیل بھی سمجھتا ہے یہاں دیہاڑی دار "دلال" مراد نہیں  ہیں اور یہاں کالا کوٹ لٹکا کر گھومنے والے بھی نہیں ہیں وہ وکیل  جو خود کو وکیل بھی سمجھتا ہے عدلیہ کے اندر کس کی ہمت ہے جو اس کو ایک لفظ  بھی سنا سکیں سوال ہی نہیں پیدا ہوتا وکیل اپنی شان کے ساتھ کورٹ روم میں آتا ہے اپنے ان اختیارات کے ساتھ اپنی اس طاقت کے ساتھ جس کا تعین اس نے خود ہی کرلیا ہے میرے ایک دوست نے گزشتہ سال لاہور ہایئکورٹ میں ایک پٹیشن داخل کی تو جسٹس صاحب کو پٹیشن ڈسمس کرنے کا بڑا شوق تھا وہ ساری پٹیشنز سرسری سن کر ڈسمس کرتے جارہے تھے ان کا حشر بھی یہی ہوا تو انہوں نے آگے سے کہا  ڈسمس۔۔۔ڈسمس میرے سے پہلے کی دس پٹیشنز بھی ڈسمس اور اگلی دس پٹیشنز بھی ڈسمس ایسا کر کورٹ کے باہر ایک بورڈ لکھ کے لگا دے کہ ڈسمس پتا نہیں تمہیں جسٹس کس نے لگایا ہے یہ سن کر پٹیشن ڈسمس کرنے کے شوقین جسٹس نے حکم دیا کہ "اریسٹ ہم" اسے گرفتار کرلو تو اس  نے اس کو کھڑے کھڑے جواب دیا "اریسٹ ہم" کا بچہ مجھے گرفتار کرنے کیلئے تمہیں عدالت سینٹرل جیل کے اندر لگانی ہوگی خیر اب اتنی ہمت کس میں ہے کہ وکیل کو کورٹ  روم سے گرفتار کرسکے لیکن اس جسٹس کو یہ سبق ضرور مل گیا کہ اپنی طاقت کے ساتھ سامنے والے کی طاقت کا احترام بھی ضروری ہے بدمعاشی کی اجازت تو کسی بھی صورت اور کسی بھی قیمت پر کسی کو نہیں دی جاسکتی چاہے وہ کوئی جسٹس ہو،سیشن جج ہو یا مجسٹریٹ کراچی میں بعض جسٹس جس طرح کاروائی چلاتے ہیں اس طرح کے رویئے کی اجازت پنجاب میں نہیں دی جاسکتی  اور کراچی میں ایسا کیوں ہوتا ہے  اس کے پیچھے بار کی کمزوری کے علاوہ بھی ایک وجہ ہے یعنی مالی معاملات ہیں اسی طرح پنجاب بھر میں بار ایسوسی ایشنزنے اپنی  "رٹ" قائم کی ہے وہ کسی کتاب میں نہیں لکھی ہوئی ہے پنجاب میں مجسٹریٹ پولیس کی رپورٹ پر تفصیلی  حکم نامہ جاری کرنے کا ہر صورت میں پابندہے وہاں ایک انگریزی کا لفظ لکھ کر بے قصوروں اور بے گناہوں کو رگڑنے کی اجازت ہر گز نہیں ہے اس  کے پیچھے بھی بار کی طاقت ہے
ولیس ایک طاقت ہے  لیکن وہ ایک مکار طاقت ہے  وہ مکاری سے عیاری سے اپنی طاقت کو استعمال کرتی ہے اور استعمال کرنا خوب جانتی  بھی ہے پولیس ایک بے رحم طاقت  ہے
پولیس نے بھی اپنی طاقت کا تعین خود ہی کرلیا ہے  اور چالاکی اور مکاری سے اپنے افسر کو اپنا ذہنی ماتحت بنالیا ہے وہ شہریوں کو بدمعاشی سے تنگ کرتے ہیں جبکہ عدالت کو مکاری سے  اپنا غلام بناتے ہیں اپنے ذہنی غلام کو دس سیلوٹ مار کر یقین دلاتے ہیں کہ ہم ماتحت آپ کے ہیں لیکن کام آپ سے اپنی مرضی کا ہی کروائیں گے مکاری سے جھک کر وہ یقین دلادیتے ہیں کہ  ہم آپ کے ماتحت ہیں لیکن  ان کے دماغ میں جو سوفٹ ویئر فٹ کردیا گیا ہے اس کے مطابق انہوں نے خودہی یہ فیصلہ کرلیا ہے کہ منصف کی سیٹ پر جو شخص بیٹھا ہوا ہے وہ ان کا ذہنی ماتحت ہے اور اس کے دل کو خوش کرنے کیلئے دس سیلوٹ ٹھوکنے پڑجائیں
 وہ  اس تابعداری کیلئے ہر لمحہ تیار ہیں  اگر وہ شور مچاکر دل کو خوش کرلیتا ہے تو کوئی مسئلہ نہیں ہے لیکن ان کے دماغ کے اندر جو طاقت موجود ہے وہ اپنے ماتحت سے کام  اپنی مرضی کا ہی کرواتے ہیں  لیکن کیونکہ پولیس ایک مکار طاقت ہے اس لیئے وہ پوری مکاری اور عیاری سے  ساب کو یقین دلاکررکھتی ہے کہ ہم آپ کے خادم آپ کے نوکر چاکر ایک اشارہ تو کریں لیکن  مرضی میری  ہی ہوگی
طاقت اور اختیارات کا تعین دنیا کی کوئی طاقت نہیں کرسکتی دنیا کے سب آئین طاقت اور اختیار کے سامنے بے بس ہیں
اب وزیراعظم کو ہی دیکھ لیں یہ بیچارہ آرمی چیف کا تقرر کرتا ہے  اور بظاہر چیف  وزیراعظم کے ماتحت ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ ایسا ہرگز نہیں  کیونکہ آرمی چیف بھی  از خود اپنی  طاقت اور اختیارات کا تعین کرچکا ہےاسی طرح ڈی جی  "آئی ایس آئی" بظاہر تو آرمی چیف کے ماتحت ہے لیکن  حقیقت یہ ہے کہ آئی ایس آئی کے سربراہ نے از خود ہی اپنی طاقت اور اختیارات  کا تعین کرلیا ہے مشرف کا انجام سب کے سامنے ہے کیونکہ ساری خفیہ طاقتیں افتخار چوہدری کے ساتھ تھیں اور آرمی چیف بے چارگی سے صرف تماشہ ہی دیکھتا رہا
طاقت اور اختیارات کا تعین تو دماغ طے کرتا ہے
طاقت ۔۔طاقت  کے استعمال سے ہی آتی ہے مجسٹریٹ جب کسی سرکش پولیس افسر کے ناقابل ضمانت وارنٹ جاری کرتے ہیں تو پھر وہ منسوخ کیوں ہوجاتے ہیں  کان سے پکڑ کر پولیس افسران کو صرف ایک ہفتے کیلئے جیل بھیج دیں تو سارے کس بل ایک منٹ میں نکل جائیں گے ذیادہ نہیں دس سال پرانی بات ہے کراچی کے دو سیشن ججز نے جب دیکھا  تھا کہ پولیس بے لگام ہوچکی ہے اور ایس ایچ او بھی بات نہیں مانتا تو ایک واقعہ میں   پولیس  کے افسران کو جب ہتھکڑیاں لگا کر جیل بھیجا تو سب کے سب ٹھیک ہوگئے تھے اسی طرح صرف ایک رپورٹ وقت پر نہ آنے پر وہ اپنے اختیارات استعمال کرنے میں کنجوسی سے کام نہیں لیتے تھے  ایس ایچ اوز روزانہ ہی لائن لگا کر کورٹ کے باہر کھڑے ہوتے تھے اور ان کے خلاف کیسز بھی ان کو پورا دن بیٹھا کر  اور پوری اکڑخانی نکلوا کر سنے جاتے تھے آج ہر گز ایسا نہیں کہ پولیس شریف ہوگئی یا ان کے خلاف کراچی میں شکایات ختم ہوگئی ہیں بلکہ وہ سیشن ججز باقی نہ رہے آج تو جج سوال کرتے ہیں کہ کیا میں یہ کرسکتا  
ہوں کیا یہ میرا اختیار ہے ایک جج یہ سوال کرے اس سے بڑا مذاق کیا ہوگا
کل ایک جج یہ سوال بھی کرسکتا ہے کہ یہ جج کی ٹیبل پر جو ہتھوڑی پڑی ہوتی ہے کیا وہ کیل ٹھونکنے کیلئے رکھی ہے یایہ اخروٹ توڑنے کے کام آئے گی


Monday, 24 November 2014

انگریزی زبان کا ایک لفظ اور اونٹ سے بڑے ساب

میں حیرت سے  آنکھ جھپکے بغیرعدالت میں موجود  اس اونٹ سے بڑے  شخص کو دیکھ رہا تھا اور سوچ رہا تھا کہ اس ادارے کی عظمت کو اکیس توپوں کی سلامی یہ اتنے بڑے  لوگ تلاش کیسے کرلیتا ہے جبکہ وہ اونٹ سے بڑا  ساب کورٹ کی فائل کے صفحات یوں الٹ پلٹ رہا تھا جیسے پہلے دن کوئی جونئیر وکیل کسی مقدمے کی فائل اٹھاتا ہے تو اس کو سمجھ نہیں آتی کہ وہ اس کو کیسے سمجھے کیسے اس کیس کا مطالعہ کرے
واقعہ یہ تھا کہ اس  کی غفلت سے تین بے قصور اور بے گناہ لوگ  جن میں ایک بوڑھی اور بیمار عورت  بھی شامل تھی ایک  کیس میں بری طرح فٹ کردیئے گئے تھے اور وہ جس کا  فکری  اور ذہنی قد کاٹھ اونٹ سے بھی کافی بڑا تھا یوں بے نیاز بیٹھا تھا جیسے کچھ ہوا ہی نہیں
میرا دعوٰی ایک دلیل کے ساتھ ہمیشہ سے یہی رہا ہے کہ صوبہ سندھ کی عدالتوں کے مجسٹریٹ سطح کی عدلیہ کی اکثریت پولیس کی ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت ہے عدلیہ کی انتظامیہ سے علیحدگی کا تاحال سب سے بڑا نقصان یہ ہوا ہے کہ پہلے پولیس والے اپنے ایک افسر کے سامنے پیش ہوتے تھے اور اب وہ اپنے ایک ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت کے سامنے پیش ہوتے ہیں اس کی وجہ صرف اور صرف نااہلوں کی وہ فوج ہے جو جمع کرلی گئی ہے یہ بے چارے نہیں جانتے کہ تفتیش کیا ہوتی ہے اور تفتیش کے دوران مجسٹریٹ کی ذمہ داری کیا ہے اور تفتیش مکمل ہونے کے بعد جب پولیس چالان لیکر آتی ہے تو اس چالان پر اپنی رائے کس طرح قائم کرنی ہے نہ تو ان کو ادارے نے کوئی تربیت دی ہے نہ وہ تربیت دینے کی کوکوئی ضرورت محسوس کرتے ہیں   میں پورے کراچی میں صرف دو مجسٹریٹ صاحبان کو جانتا ہوں جو کہ انتظامی حکم جاری کرنے سے پہلے پولیس فائل سکون سے پڑھتے ہیں مطالعہ کرتے ہیں اور ایک تفصیلی حکم نامہ  جاری کرتے ہیں اور اکثر اوقات وہ پولیس کی رائے سے اتفاق  نہیں کرتے جس کے نتیجے میں پولیس  کے فراڈ اور دھوکے سامنے آتے رہتے ہیں  کیونکہ وہ  نہ تو پولیس کے ذہنی غلام ہیں اور نہ ماتحت  اسی پریکٹس کے تحت انہوں نے سینکڑوں بے گناہوں کو پولیس کی حراست سے نکلوایا اسی پریکٹس ہی کے تحت کتنے ہی ملزمان کی ہتھکڑی کورٹ میں ہی کھلوادی گئی کہ کیس بنتا ہی نہیں  اصولی طور پر تمام عدالتی افسران کو یہ کام کرنا ہے ہوسکتا ہے کچھ اور لوگ بھی یہ نیک کام کرتے ہوں میرا واسطہ ان سے نہیں پڑا
تفتیش کے بعد مجسٹریٹ  انتظامی حکم کے زریعےکیس کی گرفت کرتا ہے اس پر آرڈر پاس کرتا ہے اس انتظامی آرڈر کی اہمیت کا  اندازہ آج تک ان نااہلوں کو ہو ہی نہیں سکا کہ یہ ہوتا کیا ہے  سپریم کورٹ  اور ہایئکورٹ نے  لاکھوں  صفحات ضائع کردیئے اس راز کو تلاش کرنے کیلئے کہ پولیس کی تفتیش مکمل ہوجانے کے بعد پولیس کا ادنٰی سا خادم اور ذہنی غلام اس پر جو حکم نامہ جاری کرتا ہے وہ ایک انتظامی نوعیت کا آرڈر ہے یا جوڈیشل آرڈر
قانون دانوں اور ججز کے ایک بہت بڑے گروہ کا یہ کہنا ہے کہ پولیس کی تفتیش پر مجسٹریٹ جو حکم جاری کرتا ہے اس کی نوعیت جوڈیشل ہے جبکہ  قانون دانوں اور وکلاء کی اکثریت اس پر اب متفق ہوچکی ہے یہ انتظامی نوعیت کا حکم ہے اور اس حکم کے خلاف اپیل بھی ہایئکورٹ میں ہوگی وہ بھی ایک آئینی پٹیشن کے زریعے لیکن تصویر کا دوسرا رخ یہ ہے کہ کیا ان کو وہ اہم ترین انتظامی آرڈر لکھنے آتا ہے اگر سپریم کورٹ اتنی بات سوچ لیتی تو وہ اس فضول بحث میں الجھنے کی بجائے اپنے عدالتی افسران کی تربیت کا انتظام ہی کرلیتی
اب ملاحظہ فرمائیں وہ واقعہ جس کے تحت عدالت میں تعینات  پوسٹ گریجویٹ اونٹ سے بڑے ساب  کو  میٹرک پاس پولیس والا کیسے ایک جج  کو  ماموں بناکر چلا گیا
واقعہ کچھ یہ تھا کہ ایک گھر کے اندر ہونے والے واقعہ کی ایف آئی آر درج کروائی گئی  ایک شخص نے ایف آئی آر درج کروائی کہ اس کی  بیوی اور بیٹوں نے اس کو پاگل خانے میں پاگل قرار دے کر داخل کروادیا تھا جس کے بعد اس کے رشتے داروں نے اس کو وہاں سے نکلوایا جس کے بعد جب وہ اپنے گھر آیا تو اس کے بیوی بچوں نے  اس پر تشدد کیا اور پستول دکھا کر جان سے مارنے کی کوشش کی جس کے بعد اس نے اپنی اسی گھر کی گراؤنڈ فلور پر رہایئش پذیر اپنی بیٹی  "ج" کے گھر پناہ لی تفتیش کے بعد اصل واقعہ یہ سامنے آیا کہ وہ شخص واقعی  پاگل ہے  اس کو نفسیاتی ہسپتال میں داخل کروایا گیا تھا علاج معالجے کیلئے اسی دوران اس کے رشتے دار اس کو وہاں سے زبردستی نکلوا کرلے گئے ڈاکٹر نے گواہی دی کہ یہ شخص خطرناک نفسیاتی مریض ہے اس کے علاوہ وہ اپنی جس بیٹی کے ساتھ گراؤنڈ فلور پر رہتا ہے اور اس نے اپنے بیان کے مطابق اس کے گھر پناہ لی تھی  اس نے بھی واقعہ سے لاعلمی کا اظہار کیا  جس کے بعد اس کیس کو  شواہد کے مطابق"اے کلاس" میں ختم کردیا گیا
دوبارہ تفتیش ہوئی پولیس نے رشوت مانگی ملزمان نے نہیں دی جس کے بعد پولیس افسر نے چالان پیش کردیا اور دوشناختی کارڈز کو گواہ بنایا ایک شناختی کارڈ نیو کراچی کا دوسرا شناختی کارڈ سیفل گوٹھ  کا ہے جن کا دعوٰی تھا  کہ وہ اس واقعے کے گواہ ہیں   سوال یہ ہے کہ وہ پہلے کیوں نہیں پیش ہوئے جب کہ ایک گلشن اقبال میں ہونے والے گھریلو جھگڑے کی گواہی نیوکراچی یا صفورا گھوٹھ کا رہایئشی کیسے دے سکتا ہے واقعہ کے گواہ اڑوس پڑوس کے لوگ ہوسکتے ہیں جبکہ حیرت ہے کہ وہ گواہ بننے کیلئے   گھر کے اندر داخل ہوکر فرسٹ فلور پر بھی چڑھ گئے سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ وہ  دو گواہ گھر کے فرسٹ فلور پر کیا کررہے تھے
حقیقت یہ ہے کہ تفتیشی افسر نے دوشناختی کارڈز کی فوٹو کاپیاں  پیدا کرکے دو چشم دید جعلی گواہ بنائے لیکن یہ وضاحت نہ کی کہ وہ ایف آئی آر درج ہونے کے آٹھ مہینے تک کہاں رہے شاید اس کو یہ بھی نہیں پتہ کہ شناختی کارڈ  کی فوٹو کاپی کو گواہ کیسے بنایا جاتا ہے
لیکن سب سے بڑا دھوکہ یہ دیا گیا کہ جس ڈاکٹر کی گواہی کی بنیاد پر کیس ختم کیا گیا تھا اس کو اس کیس کا مرکزی گواہ بنا لیا گیا حالانکہ اس نے اپنی  گواہی تبدیل نہیں  کیس کی فائل میں اس کا بیان موجود ہے کہ مدعی مقدمہ پاگل ہے  لیکن یہ فائل پڑھنے کی زحمت کون کرے گالیکن ایک  مجسٹریٹ کو کیا پتہ کہ پراسکیوشن کا گواہ کیا ہوتا ہے  ایک  مجسٹریٹ کو کیا پتہ کہ ایف آئی آر کیا ہوتی ہے ایک مجسٹریٹ  کو کیا پتہ کہ پولیس نے اہم ترین گواہ کو گواہ کیوں نہیں بنایا
پولیس نے چالان اپنے ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت کے سامنے پیش کیا جس پر سندھ ہایئکورٹ کے مقرر کردہ مجسٹریٹ نے صرف ایک انگریزی زبان کا لفظ لکھا "رجسٹرڈ" اور پولیس کی تفتیش سے  مکمل اتفاق کرلیا سوال یہ تھا جو کہ اب ہمارا مطالبہ بھی بن چکا ہے کہ اگر انگریزی زبان کا ایک لفظ لکھنا ہی انتظامی حکم ہے تو اس کیلئے کسی پوسٹ گریجویٹ کی خدمات لینے کی ضرورت کیا ہے کورٹ کا ایک چپراسی مقرر کردیا جائے کافی ہے کیونکہ یہاں چپراسی بھی میٹرک پاس  ہے وہ بھی انگریزی زبان کا ایک لفظ لکھ سکتا ہے
میں نے جب اس ساب کی توجہ اس جانب دلائی تو اونٹ سے بڑے اس  ساب نے کورٹ کی فائل کے صفحات کے صفحے یوں الٹنے پلٹنے شروع کردیئے جیسے کہ  اداکارہ میرا کا نکاح نامہ غلطی سے فائل میں آگیا ہو  "ادھر ادھر "کی باتوں کے بعد میں نے پوچھا کہ آپ نے پڑھے بغیر ہی سوچے سمجھے بغیر ہی   اتنا اہم ترین انتظامی حکم نامہ دستخط کردیا ہے اور پولیس والا اونٹ سے بڑے  ساب کو "ماموں "بناکر چلا گیا
اب ہوگا کیا کیس چلے گا گواہ نہیں ملیں گے ڈاکٹر آئے گا گواہی دے گا جس کے بعد کیس ختم
آپ نے اکثر دیکھا ہوگا کہ ہماری سپریم کورٹ کے جسٹس صاحبان "ناناپاٹیکر" کی طرح ڈایئلاگ مارنے کے شوقین ہیں وہ اپنا تاریخی ڈائیلاگ مارتے ہیں کہ پولیس کی غلط تفتیش کے نتیجے میں ملزمان بری ہوجاتے ہیں  اور ہمارے اخبارات اس کی شہہ سرخیاں لگاتے ہیں جیسے کسی چرسی بابے نے کوئی راز کی بات بتادی ہو یا کوئی سٹے کا نمبر بتادیا ہو حقیقت یہ ہے ہماری سپریم کورٹ اور ہایئکورٹ کے جسٹس  صاحبان حقیقت سے نظریں چرا کرجھوٹ  بولتے ہیں  اور عوام کو دھوکہ دیتے ہیں وہ اپنے ادارے میں موجود اونٹ سے بڑے  دانشوروں کی نااہلی کا اعتراف کرنا نہیں چاہتے جن کی نااہلی کی وجہ سے پولیس چالان منظور کروالیتی ہے جس کی وجہ سے پولیس بے گناہوں کو  جھوٹے کیس میں پھنسالیتی ہے پولیس ایک عام شہری پر جو بھی تشدد کرتی ہے اس کی ذمہ دار وہ عدلیہ جس کے متعلق دعوٰی کیا جاتا ہے کہ پاکستان میں ایک آزاد عدلیہ موجود ہے جی ہاں عدلیہ مکمل آزاد ہے لیکن  یہ آزادی عدلیہ نے پولیس کو دے رکھی ہے کہ جس کو چاہے جس کیس میں چاہے اٹھا کر فٹ کردے
سپریم کورٹ اور ہایئکورٹ کی اوقات کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ وہ گزشتہ  ستاسٹھ سال سے حکم نامے جاری کررہی ہے کہ انتظامی حکم اسپیکنگ ہونا چاہیئے اور جانچ پڑتال کے بعد جاری کرنا چاہیئے جبکہ آج تک وہ اپنی ماتحت عدلیہ سے یہ بات نہیں منوا سکے کہ وہ انتظامی حکم اسپیکنگ نوعیت کا لکھیں کہ وہ کونسی وجوہات ہیں جن کی بنیاد پر وہ پولیس کی تفتیش سے اتفاق کرکے کیس کو سماعت کیلئے منظور کرتے ہیں  آج بھی اکیسویں صدی کے اس دور میں  ہم اونٹ سے بڑے  سابوں  سے انصاف کی توقع رکھتے ہیں  جو کہ انگریزی زبان کے ایک لفظ کے زریعے  کسی کے بھی مستقبل سے کھیل سکتے ہیں ہم ہایئکورٹ سے اب کبھی بھی یہ نہیں کہیں گے کہ وہ اس سلسلے کو روکیں کیوں روکا جائے اس ملک کے  غریب آدمی کو اوقات میں رکھنے کیلئے ضروری ہے کہ اس پر پولیس مسلط کی جائے اس کو پولیس کے زریعے ذلیل کیا جائے شاید عدلیہ کی خواہش ہے کہ پولیس  غریب لوگوں کو جھوٹے کیسز میں پھنسائے یہی وجہ ہے کہ صرف انگلش زبان کا ایک لفظ لکھ کر ہمارے عدالتی افسران پولیس کے فراڈ کو پولیس کے دھوکے کو تحفظ فراہم کرتے ہیں  ہم ہایئکورٹ سے  مطالبہ کرتے ہیں کہ  وہ اپنا مشن جاری و ساری رکھے لیکن خدا کے واسطے انتظامی حکم کا عدالتی اختیار  اونٹ سے بڑے ان سابوں سے لیکرکورٹ کے چپراسیوں کو دے دیا جائے کورٹ کے پٹے والوں کو دے دیا جائے وہ بھی میٹرک پاس ہیں انگلش کا ایک لفظ لکھ ہی لیں گے
اسی طرح ہم چیف جسٹس سندھ ہایئکورٹ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ سندھ جوڈیشل اکیڈمی کو فوری طور ختم کرنے کا اعلان کرکے وہاں کوئی  ڈھنگ کا شاپنگ سینٹر بنادیں   یا وہاں کوئی  بریانی  کی دکان کھول دی جائے یہ ججز کی تربیت کا ڈھکوسلہ ختم کیا جائےلعنت ہے اس  جوڈیشل اکیڈیمی پر جو  ججز کو ایک انتظامی حکم نامہ لکھنا نہ سکھا سکے

وہ وقت دور نہیں جب لوگ عدلیہ کے خلاف تشدد کا راستہ اختیار کرنے پر مجبور ہوجائیں گے 

Tuesday, 4 November 2014

ایک ممبر سندھ بار کونسل کا انٹرویو


سندھ بارکونسل کی کارکردگی کے حوالے سے اگر بات کی جائے تو یہ بات سامنے آجاتی ہے کہ ممبران نے نااہلی کے تمام ہی ریکارڈ توڑڈالے ہیں اس کارکردگی کے بعد شرم وحیا کا تقاضا یہ تھا کہ سابق ممبران دوبارہ بار کا رخ ہی نہیں کرتے لیکن کیا کیا جائے کہ سندھ بارکونسل کے وسائل لوٹنے کھسوٹنے کے بعد جب کسی احتساب کا خوف بھی نہ ہو  اور پانچ سال تک اقتدار کے مزے لوٹنے کے بعدیہ سندھ بار کونسل  کی  حکمرانی بھی ایک ایسا نشہ بن چکی ہے کہ بقول شاعر ” چھٹتی نہیں ہے منہ سے یہ کافر لگی ہوئی“یہی وجہ کہ وہ تمام نااہل افراد ایک بار پھر سندھ بار کونسل میں نہ صرف ڈھٹائی سے حصہ لے رہے ہیں بلکہ اپنی نااہلی کا بھی سرعام دفاع کررہے ہیں اسی حوالے سے حقائق جاننے کیلئے ہم نے ایک  ممبر سندھ بارکونسل سے ملاقات کا وقت لیا  اور ان کے خیالات جاننے کی کوشش کی

 سندھ بار کی کارکردگی کے حوالے سے آپ کیا کہیں گے؟


سب سے پہلی بات تو یہ ہے کہ میں ایک انتہائی مصروف ترین وکیل ہوں اور سند ھ بار کونسل  کےالیکشن میں حصہ لیکر میں اپنا قیمتی وقت وکلاء برادری کیلئے وقف کرتا ہوں لیکن افسوس کہ ان وکیلوں کو میری قدر ہی نہیں ہرجگہ ہماری کارکردگی کا ڈھنڈورا ہی پیٹتے رہتے ہیں ذرا سا دانت پیس کر یہ جو نوجوان وکیل باتیں کرتے پھر رہے ہیں ان کا حقائق سے کوئی تعلق نہیں ہے  حقیقت یہ ہے کہ یہ میرا ایک سندھ بار کونسل اور وکلاء پر احسان ہے کہ میں اپنا قیمتی وقت ان کو دیتا ہوں وکلاء کا مجھ پر کوئی بھی احسان نہیں  جناب شاید آپ میرا سوال سمجھ نہیں سکے میں نے سندھ بار کونسل کاکردگی کے حوالے سے سوال کیا تھا؟ جب تک آپ وکیل لوگ میرا یہ احسان تسلیم نہیں کرتے  کہ میں اپنی پروفیشنل مصروفیات میں سے اپنا قیمتی وقت نکال کر سندھ بار کونسل کو اپنا انتہائی قیمتی وقت دیتا ہوں  اس وقت تک میں کیا جواب دے سکتا ہوں 

 آپ نے گزشتہ الیکشن میں بھی وعدہ کیا تھا کہ وکلاء کیلئے عالمی معیار کا رہایئشی ہاسٹل اور اسپتال بنایا جائے گا اس وعدے کا کیا ہوگا؟

میری مصروفیات میری وکالت میرا کام اتنی  بڑی لاء فرم چلانا کوئ بچوں کا کھیل نہیں آپ ابھی بھی انتظار گاہ میں جاکر دیکھیں میرے کلایئنٹس کا رش لگا ہوا ہے یہ میری کل کی ڈائری دیکھیں کل بھی بے شمار کیسز لگے ہوئے ہیں اس کے باوجود میں نے سندھ بارکونسل کو ٹائم دیا اور میں وعدہ کرتا ہوں کہ اس بار منتخب ہوکر یہ کام بھی کرہی دوں گا ویسے شہر میں اچھے ہوٹل اور اچھے اسپتالوں کی کوئی کمی نہیں اگر کسی کو ایڈریس پتا نہ ہوتو میں بتادوں گا

 سندھ بار کونسل  حکومت کی مالی امداد کیوں نہیں قبول کرتی؟

یہ الزام درست نہیں اگر ہم چاہیں تو ایک سال میں ہاسٹل بھی بن جائیں گے اسپتال بھی بن جائیں گےوکلاء کیلئے اعلٰی معیار کے کلب بھی بن جائیں گےمیڈیکل فنڈ میں بھی اضافہ ہوجائے گااور وکلاء کے بینوویلنٹ فنڈ میں بھی اضافہ ہوجائے گا لیکن ہم حکومت کا احسان نہیں لینا چاہتےاسی وجہ سے ہم حکومت کی امداد قبول نہیں کرتےایک صدر پاکستان نے پانچ کروڑ کے ابتدائی پیکیج کا اعلان کیا تھا اور شرط صرف اتنی رکھی تھی کہ ہم ایوان صدر سے آکر یہ چیک لیجائیں لیکن ہم نے کہا کہ آپ بزریعہ ڈاک پانچ کروڑ کا چیک بھجوادیں جس پر صدر صاحب برا مان گئےویسے بھی مجھے نہ تو اسپتال کی کوئی ضرورت ہے اور نہ ہی ہاسٹل کی اللہ کا شکر ہے کہ میرا اور میرے بچوں کا علاج  عالمی معیارکے اسپتالوں میں ہوتا ہے جبکہ میں ہمیشہ فائیو اسٹار ہوٹلوں میں ٹہرتا ہوں اگر وکلاء کیلئے ہاسٹل بن بھی جائے گا تو کونسا انقلاب آجائے گا

سوال: آپ کے آئیندہ کیا منصوبہ جات ہیں آپ کس بنیاد پر الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں؟

ممبر سندھ بار مسکرا کر جب تک بریانی کی ایک پلیٹ کے بدلے ووٹ کا سودا کرنے والے وکلاء موجود ہیں  اور لائن میں لگ کر  ذلت آمیز طریقے سےاپنے بار کے کارڈ کی فوٹو کاپی جمع کروا کرسو سوروپے کی ڈائری لیکر ووٹ ڈالنے والے لوگ موجود ہیں مجھے کسی کواپنا پروگرام دینے کی کوئی ضرورت نہیں میں سالانہ پانچ سو وکلاء کیلئے ڈنر کا اہتمام کرتا ہوں کیا یہ سب  وکیل میرے چاچے لگتے ہیں  یا میرے مامے لگتے ہیں  یہ سب جانتے ہیں کہ میں ان  کو کیوں ڈنر کھلاتا ہوں  کیا میرا دماغ خراب ہے یا میرے سر پر دوعدد سینگ آپ کو نظر آرہے ہیں وکیلوں سے صاف صاف کہتا ہوں میرا نہ پچیس سال پہلے کوئی پروگرام تھا نہ آج ہے جس نے جو مہم چلانی ہے شوق سے جاکر چلالےمیں گزشتہ پچیس سال سے ممبر سندھ بار کونسل بن رہاہوں اور اگلے پچیس سال بھی بنتا رہوں گا  میں دعوے سے کہتا ہوں کہ وہ وکلاء جو گزشتہ پچیس سال سے ایک کورٹ کی ڈائری اور بریانی کی ایک پلیٹ کے بدلے مجھے ووٹ دے رہے ہیں  وہ اس بار بھی مجھے مایوس نہیں کریں گے ویسے بھی مایوسی کفر ہے

تبدیلی کے نعرے کے حوالے سے آپ کیا کہتے ہیں ؟

اس نعرے کی بھاری قیمت لیڈرشپ کو ادا کرنی ہوگی نئی لائیبریری بنالینا بار کی تزئین و آرائش کروالیناسیکورٹی بہتر بنالینا نادرا کا ویریفیکیشن سینٹر بنالینا کونسی تبدیلی ہے  ،کار پارکنگ بنالینا کونسی تبدیلی ہے یہ سب تو میرے ایک منٹ کے کام تھے لیکن میں نے کیئے نہیں

 آخر کیوں نہیں کیئے کوئی وجہ تو ہوگی؟

میں نے اس لیئے کوئی کام نہیں کیا کیونکہ یہ وکیل لوگ اس قابل ہی نہیں اب آپ ہی بتائیں  ڈسٹرکٹ کورٹ کے وکلاء کا کتابوں کے مطالعے سے کیا لینا دینا پہلے مطالبہ تھا لائیبریری بنادو وہ بن گئی تو مطالبات آگئے کہ نئی کتابیں  بھی چاہیئں اب کچھ لوگ کہہ رہے ہیں کہ کورٹس میں لفٹ لگا دو پارکنگ کے بعد اب کچھ تبدیلی کے علمبردار یہ کہہ رہے ہیں میڈیکل کے فنڈ میں اضافہ کردو پھر کچھ لوگ آجائیں گے جو یہ کہیں گے بینوویلنٹ فنڈ میں اضافہ کردو ان وکیلوں کا سر پر نہ چڑھاؤ اگر یہ سرپر چڑھ گئے تو پھر یہ اتریں گے نہیں پرانا فارمولہ ہے سال میں ایک بار بریانی  کی ایک پلیٹ ہاتھ میں پکڑادو اور ایک مفت کی ڈائری بس کام ہوگیا پھر کل ایک نئی قوم آجائے گی جو کہے گی کہ وکلاء کیلئے پروفیشنل رہنمائی کا اہتمام کیا جائےیہ جولوگ نوجوانوں کو اکسا کر سر چڑھا رہے ہیں کل وہ خود پچھتائیں گے  آج جو میرے بھائی اور سیاسی نابالغ نوجوانوں کو پرانی لیڈرشپ کے خلاف ورغلاء رہے ہیں ان کو ایک نہ ایک دن خود پچھتانا ہوگااگر یہ نوجوان ووٹر بیدار ہوگئے تو یہ معاملہ دور تک نکل جائے گااور اگر ایک بار ان کے چند مطالبات مان لیئے گئے تو نئے مطالبات کی لسٹ تیار ہوجائے گی پھر ایک پینڈورا بکس تیار ہوجائے گا جس کو بند کرناناممکن ہوگاکل یہی وکیل آپ دیکھیں گے کہ کسی نظریئے کی بنیاد پر سندھ بار کا الیکشن لڑرہے ہونگےوکیل مطالبات لیکر آجائیں گے کہ یہ کام کردو وہ کردو ماحول خراب ہوجائے گا


بار کی ہڑتال کےخاتمے کیلئے آپ نے کوئی کوشش کی دیکھیں اس سے عوام کو کتنی تکلیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟


ممبر سندھ بار مسکرا کر دیکھا بلی آگئی نہ تھیلے سے باہر بار کی ہڑتال ہی تو ہماری اصل طاقت ہےاگر ہم عدالتیں بند نہ کروائیں تو چیف جسٹس اور اعلٰی عدلیہ ہمیں لفٹ کیوں کروائے گی اور ہمارے مطالبات کیوں تسلیم کرے گی یہی وجہ ہے کہ کوئی بھی  مسئلہ ہو ہم عدالتیں فوری بند کروادیتے ہیں  عوام جائیں بھاڑ میں اور عام وکیل جائے تیل لینے ہمیں کوئ فرق نہیں پڑتاہم بار کی ہڑتالیں جاری رکھیں گے اور جو ان ہڑتالوں کے خلاف آواز اٹھائے گا اس کا ٹینٹوا دبا دیں گے  اگر مہینے میں پانچ دن ہڑتال کے چکر میں عدالتیں بند پڑی رہیں تو کوئی فرق نہیں پڑتا اور اب تو یہ ہڑتال والی بیماری ہم سندھ ہایئکورٹ میں بھی لے آئے ہیں   

کیا ان بے وجہ کی ہڑتالوں سے وکلاء کے کوئی مسائل بھی حل ہوئے ہیں؟

ہمارا مسائل کے حل سے کیا لینا دینا اور اگر وکلاء کے مسائل حل ہوگئے تو ایک بریانی کی پلیٹ اور لائن میں سوروپے کی ڈائری کیلئے لائن میں لگ کر ہمیں ووٹ کون دے گا؟ اس سوال کا مجھے آپ جواب دے دیں

آپ کے ممبران سندھ بار کونسل پر ایک الزام یہ بھی ہے کہ آپ نے عدلیہ کو دور جدید کے تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کیلئے کوئی کردار ادا نہیں کیا عدالتی اصلاحات کیلئے کوئی کوشش نہیں کی ؟

یہ الزام درست نہیں لیکن عدالتی اصلاحات ایک ڈھکوسلہ ہیں اور ہم بلاوجہ کے ڈھکوسلوں   پر یقین نہیں رکھتے

نوجوان وکلاء کے نام کوئی پیغام ؟

خبردار ان کم بخت نوجوان وکلاء کا نام بھی میرے سامنے مت لیںکم بخت نگوڑے کہیں کے ان کم بخت سیاسی نابالغوں نے آخری عمر میں ہمیں ذلیل کرکے رکھ دیا ہے اب بلاوجہ بار میں جاکر وضاحتیں پیش کرنا پڑتی ہیں   ہم نے پچھلے پانچ سال اگر ٹکے کا کام نہیں کیا تو کونسا کفر ہوگیا یہ تو ہمیں یوں ذلیل کرتے پھر رہے ہیں جیسے  ہم نے کوئی بہت بڑا جرم کردیا ہے حالانکہ پچھلے پچیس سال میں سندھ بار کونسل نے کوئی کام نہیں کیا سندھ  بار کی یہ روایت  ہی نہیں کہ ہم کوئی کام کریں کل چند نوجوانوں کو مفت ڈائری دی لینے سے انکار کردیا کیا زمانہ آگیا ہے  لیکن اس بار مجھے ممبر بن جانے دیں ان کا علاج ضرور کروں گا کم بختوں کا یہ وہ بچے ہیں جو اس فلسفے پر یقین رکھتے ہیں کہ نہ کھیڈاں  گے نہ کھیڈن دیاں گے   

Sunday, 19 October 2014

میں تو صرف ایک ڈاکیہ ہوں ٭٭٭٭٭٭٭٭ تحریر صفی الدین اعوان


بوڑھے ڈاکیئے نے  کہا پوری زندگی میرے رہنما اصول رہے صبح وقت پر آنا دوسرا ڈاک ایمانداری سے  وصول کرکے پہنچانا میرا کام صرف ڈاک پہنچانا ہے آج تک  پوری زندگی کے دوران میں نے ایک خط بھی نہیں پڑھا ڈاک لی اورجس کی بھی ڈاک ہو اس تک پہنچادینا ڈاکیئے کو اس  سے کیا غرض کہ خط کے اندر کیا لکھا ہے
اسی طرح پوری زندگی گزار دی وہ ڈاک لیکر آتے رہے اور میں پہنچاتا رہا یہی میری ذمہ داری تھی اور میں نے نبھائی
ایک مجسٹریٹ صاحبہ نے کہا دیکھیں وکیل صاحب  میں تو صرف اور صرف ڈاکیہ ہوں پولیس جو بھی تفتیش کرتی ہے میرے پاس  ڈاک کی صورت میں جمع کروادیتی ہے اور میں نہایت ایمانداری سے اس ڈاک کو سیشن کورٹ بھیج دیتی ہوں  پوری زندگی دو کام ایمانداری سے کیئے نمبر ایک صبح سویرے وقت پر آنا نمبر دو پولیس کی تفتیش کو بغیر پڑھے بغیر سوچے سمجھے کہ  پولیس نے کیا لکھا کیا نہیں لکھا خاموشی سے اس ڈاک کو سیشن بھیج دینا میں پولیس کی ذہنی ماتحت نہیں ہوں کبھی کبھی اس کی چیخ چیخ کر بے عزتی  ہوں اور وہ سرجھکا کہ کھڑارہتا ہے
چاہے لوگ کتنے ہی ناراض کیوں نہ ہوں  اور مجسٹریٹ کو پولیس کا ذہنی ماتحت ثابت کرنے اور پولیس کا ذہنی غلام ثابت کرنے کیلئے موجودہ نااہل عدلیہ کتنے ہی دلائل ڈھونڈ کر لے آئے ہم اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے
سوال یہ ہے کہ ذہنی ماتحتی کیا ہے؟
اپنی پہچان نہ کرنا ذہنی ماتحتی ہوتی ہے۔ اپنے اختیارات سے لاعلم ہونا اور اپنے سے کم اختیار کے حامل شخص کو بااختیارسمجھنا اس کی رائے پر چلنا ذہنی ماتحتی کی علامت ہے اپنے آپ کو  میٹرک پاس تفتیشی پولیس افسر کے سامنےایک بے جان اور سونے کا قیمتی بت سمجھ لینا ذہنی ماتحتی کی علامت ہے۔ اپنے آپ کو پولیس کا ڈاکیہ سمجھ لینا اور یہ کہنا کہ ہمارا کام صرف ڈاک وصول کرکے مقدمات پولیس سے وصول کرکے سیشن جج کے سامنے پیش کرنا ہے  زمینی حقائق کو نظر انداز کرکے پاکستانی پولیس کو اسکاٹ لینڈ یارڈ کی پولیس سمجھ لینا یہ بھی ذہنی ماتحتی کی علامت ہے زمینی حقائق کے باوجود یہ خود ہی فرض کرلینا کہ پولیس رشوت نہیں لیتی اور پولیس کے رحم وکرم پر لوگوں کو چھوڑ دینا یہ سب ذہنی ماتحتی کی علامتیں نہیں تو اور کیا ہیں ہم آج  تک اسی سوال کا جواب تلاش نہیں کرسکے کہ پولیس ریمانڈ لیکر ایک مجسٹریٹ کے پاس ہی کیوں آجاتی ہے وہ کسی  اور کے پاس کیوں نہیں چلی جاتی آخر کوئی وجہ تو ہوگی کہ ایک قتل کے  مقدمے میں جو کہ سیشن ٹرائل ہے پولیس کیوں  ملزمان کو تفتیش کے بعد جب مزید حراست میں رکھنا ہو تو عدالت میں مجسٹریٹ کے پاس کیوں لیکر آجاتی ہے یہ ایک ایسا سوال ہے جس میں ہمارے پورے کریمینل جسٹس سسٹم کا وقار پوشیدہ ہے
مجھے حیرت ہوتی ہے افسوس ہوتا ہے کہ بجائے اس کے کہ ایک ایسی علمی تحریک کا آغاز کیا جائے جس کا مقصد عدلیہ  کو پولیس کی ذہنی ماتحتی اور ذہنی غلامی سے آزاد کروانا ہو   یہاں یہ دلائل لائے جاتے ہیں کہ ہم صرف  ڈاکیئے ہیں  ہمارا کام صرف ڈاک تقسیم کرنا ہے پولیس سے لیکر سیشن جج کے پاس بھیج دینا ہےلیکن یہاں بہت معذرت کے ساتھ ہماری وکلاء برادری بھی اس ذہنی غلامی کا حصہ ہی ہے کیونکہ ایک جج   عدلیہ میں شمولیت سے پہلے بار کا حصہ ہوتا ہے  وہاں بھی آج تک یہ بنیادی نقطہ وکیل نہیں جانتے کہ  پولیس ریمانڈ کیلئے مجسٹریٹ کے پاس ہی ملزم کو لیکر کیوں آتی ہےسینئر وکلاء کا کہنا یہ ہے کہ اگر لوگ جیل نہیں جائیں گے تو ہمیں فیس کیسے وصول ہوگی اسی وجہ سے جب پولیس کا کوئی ذہنی ماتحت ایک تفتیشی افسر کی ذہنی غلامی کو قبول کرکے ایک بے قصور اور بے گناہ کو گھسیٹ کر جیل میں پھینکوانے کے احکامات جاری کرتا ہے تو پولیس کا دوسرا ذہنی غلام  جس نے عدلیہ کی صحیح رہنمائی کرنی ہوتی ہے شاید پیسے کی لالچ میں خاموش رہتا ہے کیونکہ اگر ریمانڈ کے موقع پر ہی ایک بے گناہ شخص کو مجسٹریٹ جیل بھیجنے سے انکار کرتا ہے اور پولیس یہ بات ریکارڈ پر لانے سے قاصر رہتی ہے کہ اس شخص کا کیا قصور کہ اس کو جیل بھجوانا ضروری ہے تو لازمی طور پر اس کو رہا  کرنا ضروری ہوگا اور اگر ملزم ریمانڈ کے موقع پر ہی رہا ہوجائے گا تو وکیل فیس کس بات کی وصول کرے گا فیس تو ہوتی ہی ضمانت کروا کردینے کی ہے   اور بعض اوقات  اس میں اسٹیک ہولڈرز کا حصہ بھی ہوتاملزم جیسے ہی جیل پہنچتا ہے تو اس کا استقبال  لاتوں اور گھونسوں سے شروع ہوجاتا ہے جس کی اطلاع فوری اس کے عزیز واقارب کو ہوجاتی ہے جس کے بعد اس کی ضمانت پر رہائی کیلئے فیس منہ مانگی ہوتی ہے اگر وکیل  ریمانڈ کے موقع پر اپنا درست کردار ادا کرنا شروع  کردیں تو کافی مسائل حل ہوسکتے ہیں
ذہنی ماتحتی کا یہ عالم ہے کہ   لوگ یہ بات ثابت کرنے کیلئے کہ ہماری حیثیت صرف ایک بے جان بت کی ہے ہمارے پاس کوئی اختیار ہے ہی نہیں  ہم بے اختیار ہیں یہ بات ثابت کرنے کیلئے دنیا جہان کے دلائل ڈھونڈ کر لے آتے ہیں
ایک ذہنی ماتحتہ کا تو یہ عالم ہے کہ جب اس کے سامنے ایک اغوا کے مقدمے میں پولیس نے اپنی تفتیشی رپورٹ پیش کی تو اس میں کل تین ملزمان تھے تفتیشی افسر نے  چالاکی سے پراسیکیوشن کے گواہوں کی جو لسٹ کورٹ کو فراہم کی جو اس واقعہ کے چشم دید گواہان تھے وہ تینوں گواہان  ملزم بھی تھے مجھے بہت حیرت ہوئی کہ ایک ملزم استغاثہ کا گواہ  اپنے ہی خلاف کیسے ہوسکتا ہے اور یہاں تو تینوں بے قصور ملزمان  کو اپنے ہی خلاف گواہ بنایا گیا تھا جب میں نے اس کی توجہ ذہنی ماتحتہ  کو دلائی تو اس نے کہا کہ وکیل صاحب  سیشن ٹرائل میں مجسٹریٹ کی حیثیت صرف ایک ڈاکیئے کی ہے ہم صرف ڈاکیئے کا کردار ادا کرتے ہیں تفتیشی افسر جو ڈاک لیکر آتا ہے وہ وصول کرکے  سیشن جج کے پاس بھیج دیتے ہیں  مختصر یہ کہ ڈاکیئے کی طرف سے   مقدمہ  پولیس سے لیکر سیشن  بھیج دیا گیا وہاں بریت کی درخواست اسی بنیاد پر داخل کی کہ استغاثہ کے پاس کوئی گواہ نہیں ہے  اور تینوں گواہان  اسی کیس میں  ملزمان ہیں خیر سیشن جج نے مختصراً کہا کہ مغویہ بازیاب ہوگئی جواب ملا نہیں  اس نے کوئی حکم نامہ  جاری نہیں  کیا  اور اس حقیقت کے باوجود معاملہ لٹکا دیادو سال  بعدلڑکی گھر خود ہی واپس آگئی کورٹ میں بیان کروایا کہ ان لوگوں نے مجھے اغوا نہیں کیا تب کہیں جاکر  ملزمان کی  اس مقدمے سے جان چھوٹی اگر وہ  ذہنی ماتحتہ تربیت یافتہ ہوتی اور اس  مجسٹریٹ  صاحبہ کو اپنے اختیارات کا علم ہوتا تو تین بے گناہ انصاف کی سولی پر لٹکنے سے بچ جاتے لیکن اس نے کہا کہ میں تو صرف ڈاکیہ ہوں لیکن اس خود ساختہ ڈاکیئے کی وجہ سے   تین افراد دوسال تک اس مقدمے  بازی کا شکار رہے وہ بھی بلاوجہ
اسی طرح  آپ ذرا سوچیں کہ ایک لڑکی کے اغواہ کا مقدمہ ہو اور وہ  مغویہ لڑکی  خودکورٹ میں موجود ہو اور چیخ چیخ کر کہہ رہی ہو کہ ہم آپس میں محبت کرتے ہیں ہم نے پسند سے شادی کی ہے  مجھے کسی نے اغوا نہیں کیا  "میاں بیوی راضی کیا کرے گا قاضی "جج صاحب خدا کے واسطے میرے شوہر کی ہتھکڑی کھول دو اور سامنے جج کی کرسی پر بیٹھا ہوا نااہل   اس بے قصور کو اس بے گناہ کو  اسی لڑکی کے اغوا کے الزام میں جیل بھیج دے  کس جرم میں کس قاعدے کے تحت یہ بات اس ذہنی ماتحت کو خود بھی نہیں پتہ تو میں سوال کرتا ہوں کہ ایسے شخص کو پولیس کا ذہنی ماتحت نہ کہا جائے تو کیا کہا جائے پولیس کا ذہنی غلام نہ کہا جائے تو کیا کہا جائے اس وقت کراچی میں نوے فیصد  مجسٹریٹس اسی قسم کے مشین ریمانڈ دیتے ہیں شاید ہی کسی کو توفیق ہوتی ہو کہ وہ معاملے کی تہہ تک جاتا ہو میں دعوے سے کہتا ہوں کہ نوے فیصد جوڈیشل مجسٹریٹس کو یہ بھی پتہ نہیں ہوگا کہ تفتیشی ڈائری کیا ہوتی ہے اور کیا تفتیشی افسر تفتیش کے دوران  یا ریمانڈ کے موقع پر کیس ڈائری لیکر آتا ہے  اور جس  مجسٹریٹ کو تفتیشی ڈائری پڑھنا آجائے تو پھر سوال ہی نہیں پیدا ہوتا کہ تفتیشی افسر کسی بے گناہ کو ہتھکڑی لگا کر کورٹ لے آئے کریمینل جسٹس سسٹم ایک سوشل سائینس ہے اور سائنٹیفک بنیادوں پر عدلیہ پولیس کو کنٹرول کرسکتی ہے
لاء سوسائٹی پاکستان نے فیصلہ کیا ہے کہ اس معاملے پر ہم ایک سیمینار منعقد کریں گے اور رجسٹرار سمیت اعلٰی عدلیہ کے سامنے یہ معاملہ لیکر جائیں گے کہ جس طرح کے ریمانڈ موجودہ عدلیہ دے رہی ہے  اس سے تو مجسٹریٹ کے کام میں بلاوجہ اضافہ ہی ہے  جب بے گناہوں اور بے قصوروں کو مناسب وجوہات ریکارڈ پر لائے بغیر پولیس کے ساتھ ملکر جیل ہی بھیجنا ہے تو یہ کام تو ایک چپراسی ایک پٹے والے یا کسی جونیئر سطح کے کلرک سے لیا جاسکتا ہے پورے ضلع کیلئے ایک پٹے والا کافی ہے پولیس ریمانڈ لے آئے پٹے والا ٹھپے مار کے تفتیشی افسر کے حوالے کرتا جائے پولیس کی ذہنی ماتحتی کا عہدہ نبھانے کیلئے ایک چپراسی یا پٹے والے کی ضرورت ہے اور یہی فارمولہ چالان یعنی پولیس رپورٹ پر بھی نافذ کیا جاسکتا ہے ایک پٹے والا اتنی قابلیت رکھتا ہے کہ وہ انگلش میں  منظور کا لفظ لکھ سکے اس سے کورٹ کا آدھے سے زیادہ کام اور رش بھی ختم ہوجائے گا
کریمینل جسٹس  سسٹم کے اندر جب سے عدلیہ انتظامیہ سے علیحدہ ہوئی ہے  ایک سیشن جج کا کردار سب سے اہم ہوکررہ گیا ہے اسی طرح رجسٹرار کا کردار سب سے اہم ہے شہریوں  کی  پولیس سے حفاظت کیلئے ہمارے مجسٹریٹس نے تھانے جانا ہے ان کا ریکارڈ دیکھنا ہے تفتیش کے متعلق سولات کرنے ہیں    لاک اپ چیک کرنا ہے دیکھنا ہے کہ بغیر روزنامچہ کے کسی کو زیر حراست تو نہیں رکھا گیا ایک تھانے کو قواعد وضوابط کے اندر لانا ہے  اس کے بعد سارے معاملات اور ساری بے قاعدگیاں  سیشن جج کے نوٹس میں لاکر ان کو ٹھیک کرنا ہےیہ سندھ ہایئکورٹ کی ذمہ داری کے ساتھ ساتھ ہماری بار ایسوسی ایشن کی بھی ذمہ داری ہے کہ وہ  کم ازکم سندھ ہایئکورٹ کے زریعے اس ضابطے پر تو عمل درآمد کروا ہی دے کہ سیشن جج کے زریعے مجسٹریٹس تھانوں کے وزٹ کرکے وہاں سے بے قاعدگیاں ختم کروائیں اس کیلئے ماضی میں بھی کوششیں ہوتی رہی ہیں  کیا یہ حقیقت نہیں کہ پورے سندھ کے کسی ایک تھانے میں بھی سیشن ججز مجسٹریٹس کو تھانے کا ریکارڈ لاک اپ اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے حوالے سے معاملات دیکھنے کیلئے  وہاں نہیں بھیجتے کیا آپ کے پاس اختیارات کی کمی ہے یا آپ لوگ تھانہ کلچر کا  خاتمہ نہیں چاہتے اگر سول سوسائٹی آواز بلند کرے تو چند دن کے اندر عدلیہ کے تعاون سے تھانہ کلچر کا خاتمہ کیا جاسکتا ہے   اس حوالے سے ہماری سول سوسائٹی کو مسلسل آواز بلند کرنی ہوگی  


Monday, 13 October 2014

ایک دلچسپ جنگ ٭٭٭٭٭٭٭ تحریر صفی الدین اعوان

وکالت کی شان یہ ہے کہ ایک وکیل بھرپور محنت کے بعد عدالت میں پیش ہوجائے اپنے دلائل ٹھوس شواہد کے ساتھ عدالت کے سامنے پیش کرے ایسے وکیل کے ججز منتظر رہتے ہیں کیونکہ ایسے وکلاء ہی ججز  کی معلومات میں اضافہ کرتے ہیں اور نئے قانونی نقاط کے زریعے  ججز کے علم میں بھی اضافہ ہوتا ہے ایک وکیل جب اپنے کیس پر محنت کررہا ہوتا ہے تو  وہ محنت جج کے بھی کام آتی ہے
اسی طرح عدلیہ کی شان یہ ہوتی ہے کہ وکیل کے دلائل کے مقابلے میں وہ ایسا قانونی نقطہ لاکر جو وکیل کی نظر سے کسی بھی وجہ سے اوجھل ہوتا ہے کو ریکارڈ پر لانے کے بعد اس درخواست کو مسترد کرے یہ جنگ  بہت دلچسپ ہوتی ہے عموماً جج کا ذاتی موڈ پیچیدہ معاملات میں درخواست کو مسترد کرنے کا ہی ہوتا ہے
اگر وکیل کے دلائل کا جواب دینے کے بعد جج صاحب کوئی ایسا آرڈر پاس کرتا ہے جس کے زریعے وکیل  کے قانونی نقاط کا جواب دیا جائے تو اس سے وکیل کے علم میں بھی اضافہ ہوتا ہے اور کسی بھی قسم کا کوئی تنازعہ نہیں پیدا ہوتا ہے

تنازعہ اس وقت جنم لیتا ہے جب  درخواست خارج کردی جائے لیکن قانونی نقاط زیر بحث بھی نہ لائے جائیں اور وکیل کی محنت ضائع چلی جائے  

قتل کی ایف آئی آر درخت کے ساتھ باندھ دی جائے تو درخت سوکھ جائے: تحریر صفی الدین


ایف آئی آر کو دنیا کی سب سے خوفناک دستاویز کہا جاتا ہے اور پنجاب میں تو یہاں تک مشہور ہے کہ "قتل کی ایف آئی آر کسی ہرے بھرے درخت کے ساتھ باندھ  دی جائے تو وہ درخت چند دنوں میں سوکھ جائے"
ایف آئی آر  کے زریعے  ہمیشہ سے ہی صرف  مخالفین کو سبق سکھایا جاتا ہے   اور ایف آئی آر اپنے کسی بھی ذاتی یا سیاسی مخالف کو تباہ برباد کردینے کا  ہمیشہ سے ہی کامیاب زریعہ ہے ایف آئی آر کا مقصد ہرگز انصاف نہیں ہے بلکہ  مخالف کو نیچا دکھانا ہے بلکہ اگر اپنے مخالف سے بدلہ لینا ہو تو اس کو قتل کرنے کی بجائے چند جھوٹی ایف آئی آر رجسٹر کروادینا زیادہ سخت انتقام ہے
عدلیہ کی انتظامیہ سے علیحدگی کے بعد عدلیہ کیلئے ایک امتحان  یہ ہے کہ عدلیہ کی بالادستی کو ثابت کرنا ہے
پولیس   ہمیشہ سے ہی ذہنی طور پر عدلیہ کو اپنا ماتحت سمجھتی ہے پولیس  اپنے تھانے میں بیٹھ کر عدلیہ کو کوئی اہمیت نہیں دیتی ہے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں مصروف رہتی ہے
کراچی میں چند ججز ہیں جنہوں نے عدلیہ  میں بیٹھ کر اپنے اختیارات  کے مناسب استعمال  کے زریعے  پولیس کی بالادستی کو چیلنج کیا ہے ان کو ہر سطح پر خراج تحسین پیش کرنے کی ضرورت ہے
ایک مجسٹریٹ  ہی وہ اتھارٹی ہے جو عدلیہ میں بیٹھ کر پولیس کی بالادستی کو چیلنج کرسکتی ہے ان کو ظلم کرنے سے روک سکتی ہے
کیا یہ حقیقت نہیں کہ پولیس نوے فیصد بے گناہوں کو گرفتار کرتی ہے۔۔۔۔۔کیا یہ بھی حقیقت نہیں کہ پولیس تفتیش کے دوران سارا زور گرفتاری پر دیتی ہے  پولیس شواہد کی بجائے ملزم کو گرفتار کرکے رشوت وصول کرنے کے چکر میں رہتی ہے لیکن بدقسمتی  سے آج بھی مجسٹریٹس کی اکثریت مناسب وجوہات ریکارڈ کیئے بغیر  ان بے  قصور اور بے گناہ شہریوں کو مشینی انداز میں جیل کی سلاخوں کے پیچھے دھکیل دیتی ہے
آج عدلیہ اور انتظامیہ دونوں الگ الگ ہیں  لیکن پولیس رشوت لینے کے ایک ہزار ایک  طریقے جانتی ہے پولیس کو وہ سارے ضابطے اور طریقے زبانی یاد ہیں جن کے زریعے وہ رشوت وصول کرتے ہیں
ایک  عام  سا ملزم بھی پولیس کو کم ازکم پچاس ہزار تو دے ہی جاتا ہے
پولیس ایک بھرپور ریسرچ رکھتی ہے  کہ اس نے کس طرح عدلیہ کو شکست دینی ہے  پولیس کا ایک میٹرک پاس تفتیشی افسر اس لیئے مکمل تیاری کے ساتھ آتا ہے کہ  اس نے ملزم سے اچھی خاصی رشوت لینی ہوتی ہے پولیس جانتی ہے کہ عدلیہ کا کندھا کب اور کس طرح استعمال کرنا ہے اس کی وجہ ان کا وہ زریعہ آمدن ہے جو وہ ایک مجسٹریٹ کی آنکھوں میں دھول جھونک کر حاصل کرتے ہیں جبکہ پولیس کے مقابلے میں ہمارا مجسٹریٹ غیر تربیت یافتہ اور ناتجربہ کار ہے
آج عدلیہ میں بھی ایک سوچ پیدا ہورہی ہے کہ کہ کیا صرف ایک ایف آئی آر کی بنیاد پر مناسب وجوہات ریکارڈ کیئے بغیرکسی کو جیل بھیجا جاسکتا ہے؟
آج عدلیہ کا سب سے اہم ترین پرزہ اور انتظامی اختیارات کا حامل عہدہ مجسٹریٹ یہ سوچ رہا ہے کہ   وہ    اگر وہ صرف پولیس کے کہنے پر اپنا عدالتی ذہن استعمال کیئے بغیر صرف ایف آئی آر کی بنیاد پر  بے قصور افراد کو جیل بھیجنے کی ڈیوٹی پر مامور ہیں تو یہ کام تو پٹے والا یا کوئی جونیئر سطح کا کلرک بھی کرسکتا ہے؟
آج  ہمارے مجسٹریٹ بھی یہ سوچ رہے ہیں کہ آخر پولیس ریمانڈ کیلئے ایک مجسٹریٹ ہی کے پاس کیوں آتی ہے اگر صرف مشینی ریمانڈ دینے ہیں  اور اگر پولیس کے  کہنے پر صرف اور صرف ایف آئی آر ہی کی بنیاد پر لوگوں کو جیل ہی بھیجنا ہے تو یہ ٹھیکہ پورے ضلع میں ایک کلرک کو دیا جاسکتا ہے؟
اگرچہ یہ ایک خالص علمی بحث ہے کہ اگر کسی ملزم کے خلاف شہادت موجود نہیں ہے تو اس  کوجیل کیوں بھیجا جائے؟ اور اگر وہ بے قصور ہے تو اس کو رہا کیسے کیا جائے؟
سب سے پہلے تو یہ سوچنا ہوگا کہ مجرم کیا سوچ رکھتا ہے؟ وہ پولیس کا تفتیشی افسر جو ہرروز عدالت سے ریمانڈ لیکر جاتا ہے وہ کیا سوچتا ہے وہ کس طرح سے  بے گناہوں کو پکڑتا ہے وہ کس طرح سے بے قصوروں  سے رشوت وصول کرتا ہے
جب تک عدلیہ اس سوچ کا تعاقب  نہیں کرتی اس وقت تک وہ  اس مسئلے کا حل تلاش نہیں کرسکتی
ان تمام مجسٹریٹ حضرات کو خراج تحسین جو  عدلیہ کے وقار کیلئے کوشاں ہیں   جو اپنی عدالتوں میں بے قصور افراد کی ہتھکڑیاں  کھول کر  بے گناہ افراد کو پولیس کے چنگل سے نجات دلاتے ہیں
لیکن سوال یہ ہے کہ وہ اپنا موازنہ ان افراد سے کیوں کرتے ہیں جو صرف ایف آئی آر کی بنیاد پر اچھے خاصے شریف آدمی کو شہادت کی غیر موجودگی میں جیل بھیج کر پولیس کے یس مین کا کرادار ادا کرتے ہیں
کیا عدلیہ کے اچھے لوگوں کا پولیس کے ذہنی ماتحت افراد کی حمایت کرنا  کھلا تضاد نہیں ؟
وہ زمانہ چلا گیا جب درخت پر قتل کی ایف آئی آر باندھنے سے درخت سوکھ جاتا تھا وہ زمانہ چلا گیا جب انتظامیہ کے پاس عدلیہ کے اختیارات بھی ہوتے تھے وہ زمانہ بھی چلا گیا جب پولیس  عدلیہ کا کندھا استعمال کرے گی تو ہم خاموش رہیں گے سوشل میڈیا سمیت ہر فورم پر بات کی جائے گی اور بھرپور بات کی جائے گی  
عدلیہ ہر صورت میں پابند ہے کہ وہ ان وجوہات کو  ریکارڈ پر لائے جن کے زریعے  ایک بے گناہ انسان کی آزادی کو ختم کرکے اس کو جیل  بھیجنا ضروری ہوجاتا ہے اگر  صرف اور صرف ایف آئی آر ہی کی بنیاد پر مناسب وجوہات ریکارڈ کیئے بغیر کسی کو جیل بھیجنا ضروری ہوتا ہے   تو یہ انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے جس کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جاسکتا ۔۔۔۔۔۔ایسے احکامات کے خلاف  ہم اپنی پرامن جدوجہد جاری رکھیں گے

اگر عدلیہ اپنے مجسٹریٹس کی  اس موضوع پرمسلسل تربیت کا اہتمام کرے تو تھانہ کلچر کا جڑ سے خاتمہ ممکن ہے 

Wednesday, 8 October 2014

یہ زندگی اتنی تو غنیمت نہیں جس کیلئے عہد کم ظرف کی ہر بات کو گوارا کرلیں

کراچی کے مضافاتی علاقے بنیادی سہولیات سے محروم ہیں
یہ وہ کچی بستیاں ہیں جہاں صرف سر چھپانے کیلئے لوگوں کو جگہ مل گئی ہے
یہاں کی سڑکیں اور گلیاں کچی ہیں نکاسی آب کا کوئی انتظام نہیں ہے اور  اکثر کچی آبادیاں پہاڑی علاقوں میں  موجود ہیں جہاں پررہنا بھی کسی المیئے سے کم نہیں
جرائم کیلئے یہ علاقے ہر لحاظ سے مناسب ہیں یہاں  وہ بچے رہتے ہیں جن کو تعلیم کی مناسب سہولت نہیں ملتی یہاں وہ بچے رہتے ہیں  جن کی تربیت وقت خود ہی کردیتا ہے بیروزگاری یا تو جرم کے راستے پر لیجاتی ہے یا کسی تنظیم سے منسلک کروادیتی ہے
لاء سوسائٹی پاکستان نے ایسے ہی علاقوں میں قانونی مراکز قائم کیئے قانونی امداد کے ساتھ ہی ہم ایڈوکیسی کے حوالے سے پروگرامات بھی کرتے ہیں جن میں خواتین کی بھی شرکت ہوتی ہے
گزشتہ چند سالوں سے صورتحال بدل رہی ہے کچی آبادیوں میں بھی  ایسے نئے چہرے نظر آتے ہیں جن کا تعلق اس آبادی سے نہیں ہوتا ہے اسی دوران  ان کچی آبادیوں میں کالعدم تنظیموں نے اپنی تنظیم سازی کا عمل بھی مکمل  کرلیا جس کے بعد کراچی کی بنیادی سہولیات سے محروم کچی  بستیاں  کالعدم تنظیموں کی آماجگاہ بن گئی ہیں
اور ایسی تنظیمات جن کے عالمی سطح پررابطے ہیں ۔ بہت سے لوگ اس حقیقت سے نظر چرارہے ہیں کہ کراچی میں  فرقہ واریت کی شدید لہر موجود ہے جو کسی بھی وقت بھڑک سکتی ہے
ہمارے مقامی آفسز کو ملنے والی دھمکیاں ایک معمول کا حصہ بن گئی  تھیں اور مقامی کمیونٹی کی مکمل حمایت کی وجہ سے شاید ہم نے ان کو سنجیدگی سے لینا چھوڑدیا تھا لیکن بدقسمتی سے یکم اکتوبر 2014 کا دن ہمارے لیئے ایک سیاہ ترین دن ثابت ہوا جب چار مسلح افراد ہمارے ایک پسماندہ علاقے میں واقعہ   ویمن اینڈ چلڈرن کرائسز سینٹر میں داخل ہوئے یہ ایک غیر معمولی واقعہ تھا کیونکہ  فون پر دھمکی دینے اور اچانک سامنے آکر دھمکی دینے میں فرق ہوتا ہے
مختصر یہ کہ مسلح افراد نے تین دن میں اپنی سرگرمیاں ہمیشہ ہمیشہ کیلیئے بند کرنے کا حکم دیا اسی دوران انہوں نے میرا بیگ اٹھا لیا جس میں میرا لیپ ٹاپ اور ایک ڈیجیٹل کیمرہ تھا  میرا مکمل ریکارڈ اس لیپ ٹاپ میں موجود تھا اور میں نے سوچا بھی نہیں تھا کہ میں اچانک اس سے محروم ہوجاؤں گا فطری طور پر مزاحمت کی غلطی کی جو کہ سنگین ثابت ہوئی اور ایک مسلح شخص نے ہاتھ میں پکڑے پستول سے میرے سر پر بٹ مارے ایک آنکھ کی چوٹ سنگین ثابت ہوئی نتیجے کے طور پر میں شدید زخمی ہوگیا مسلح افراد فرار ہوگئے اور میرے ساتھیوں نے مجھے اسپتال پہنچایا جہاں آنکھ کا آپریشن ہوا اللہ کا شکر ہے کہ اب میں بالکل ٹھیک ہوں
اس واقعہ کا کمیونٹی نے سخت نوٹس لیا اور اپنی مکمل حمایت کے ساتھ ہمارے بعض سپورٹرز نے کہا کہ ہم ان  عناصر کے خلاف خود ہی نوٹس لیتے ہیں
ہمیں اپنے دوستوں اور کمیونٹی پر فخر ہے ہم کمیونٹی کو یہ بھی یقین دلاتے ہیں کہ ہم اپنے خون کے آخری قطرے تک پاکستان کو شدت پسندی سے بچانے کیلئے جدوجہد جاری رکھیں گے لیکن ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ  یہ عناصر کوئی مقامی گروپ نہیں ہیں ان کے انٹرنیشنل رابطے اور انٹرنیشنل ایجنڈا ہے اس لیئے ہم فی الحال کراچی کی کچی بستیوں سے اپنا قانونی امداد کا پروگرام پندرہ دن کیلئے معطل کررہے ہیں اور اپنے سیکورٹی انتظامات کو بہتر بنا کر ہم اپنے آفسز دوبارہ کھول دیں گے
لیکن میں پاکستان کے پرامن شہریوں  کی توجہ دلانا چاہتا ہوں کہ بنیادی سہولیات سے محروم ان بستیوں میں ایک لاوہ پک رہا ہے فرقہ واریت  کی فصل تیار ہورہی ہے  ایک نفرت کی ایسی آگ سلگ رہی ہے جو کسی بھی وقت ایک مستقل سانحے کا سبب بن سکتی ہے
کراچی میں مستقبل میں فرقہ واریت ایک مشکل ترین مسئلہ ہوگا ہماری سول سوسائٹی کو اس حوالے سے کوئی لائحہ عمل تیار کرنا ہوگا اور کراچی میں فرقہ وارانہ تصادم بہت بڑے پیمانے پر ہوگا جس کا ہم سوچ بھی نہیں سکتے کراچی میں کالعدم تنظیموں نے ایک الگ سے عدالتی نظام بھی تشکیل دے رکھا ہے  جہاں انسانی حقوق  اور خواتین کے حقوق کی شدید خلاف ورزیاں کی جاتی ہیں  
جن دوستوں نے عیادت کی ان کا شکریہ جن دوستوں نے اپنے تعاون کا یقین دلایا ان کا شکریہ اور میرے بہت سے دوستوں نے حکمت عملی سے کام لینے کا مشورہ دیا میں صرف اتنا کہوں گا مجھے اپنی جان کی کبھی کوئی پرواہ نہیں رہی   لیکن اپنے رضاکاروں اور کمونٹی ممبرز کی جان  ومال کے تحفظ کیلئے ہر ممکن قربانی دیں گے مشکل حالات کا مقابلہ کرنا جانتے ہیں حکمت عملی سے کام لیں گے لیکن انتہاپسند عناصر کے سامنے سرجھکانے کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا میں اس فلسفہ پر یقین رکھتا ہوں کہ
یہ زندگی اتنی تو غنیمت نہیں جس کیلئے
 عہد کم ظرف کی ہربات گوارا کرلیں


Friday, 3 October 2014

جسٹس ٹانگری تحریر صفی الدین




یہ قیام پاکستان سے پہلے کا واقعہ ہے جب اعلٰی عدلیہ میں صرف انگریز جسٹس ہوا کرتے تھے ابھی کالے پیلے لوگوں کو جسٹس بنانے کا سلسلہ شروع نہیں ہوا تھا  اندرون سندھ کے دور دراز علاقے میں ایک غریب کوہلی نوجوان کو  بکری چوری کا جرم ثابت ہونے پر ایک مجسٹریٹ نے دوسال قید کی سزا سنائی
مجسٹریٹ نے ججمنٹ اناؤنس کردی اور اپنے چیمبر میں چلاگیا اس نوجوان کی ماں روتی پیٹتی چیمبر میں گئی اور فریاد پیش کی کہ یہ نوجوان میرا اکلوتا بیٹا ہے اس پر رحم کرو  یہ اگر جیل چلا گیا تو ہم بھوکے مرجائیں گے ہمارا کوئی کمانے والا نہیں ہے جج نے فائل منگوائی بوڑھی عورت باہر چلی گئی اور اس نے  اپنی ججمنٹ کے نیچے اس واقعہ کا ذکر کرنے کے بعد سزا میں ایک سال کی تخفیف کردی پیشکار نے بوڑھی عورت کو کہا کہ جج صاحب نے سزا ایک سال کردی ہے
بوڑھی عورت دوبارہ اجازت لیکر چیمبر میں گئی اور دوبارہ فریاد کی  اور کہا کہ یہ سزا بھی بہت زیادہ ہے میرا ایک ہی بیٹا ہے یہ کماتا ہے تو ہمارا گھر چلتا ہے آپ رحم کریں ہم بہت غریب ہیں
مجسٹریٹ نے دوبارہ  اس بات کو شیئر کیا اورایک حکم نامہ لکھا اور سزا کم کرکے تین ماہ کردی جس کے بعد  اس پیشکار نے دوبارہ اس بوڑھی عورت کو جاکر یہ بات بتائی جس کے بعد وہ بوڑھی عورت اس کے بچوں کو لیکر اندر گئی اور جج سے دوبارہ فریاد کی کہ یہ اس کے بچے ہیں اور ایک ہی کمانے والا ہے آپ ہمارے حال پر رحم کریں  ہم لوگ جیتے جی مرجائیں گے جس کے اس بوڑھی کے حالات کو سامنے رکھنے کے بعد اس کے چھوٹے بچوں کی حالت کو سامنے رکھنے کے بعد اس نوجوان کی سزا میں مزید کمی کرنے کے بعد اس کو صرف ایک دن کیلئے جیل بھیج دیا اور ایک بار پھر اپنے اناؤنس شدہ حکم نامے میں ترمیم کی
کورٹ اسٹاف  تو ازل سے ہی چغل خور رہا ہے ذراسی دیر میں یہ بات سیشن جج تک پہنچ گئی سیشن جج نے طلب کیا مجسٹریٹ نے کہا  میں نے جو مناسب سمجھا کیا ہے
سیشن جج نے فوری طور پر کیس کا ریکارڈ طلب کیا اور کراچی میں موجود سندھ ہایئکورٹ کے پاس بھیج دیا چند روز بعد سندھ ہایئکورٹ نے اس مجسٹریٹ کو طلب کیا
جب مجسٹریٹ  انگریز جسٹس کے چیمبر میں داخل ہوا تو اس نے اسے مخاطب کیا  اور کہا کہ جسٹس ٹانگری آپ تشریف رکھیں
یہ سن کر مجسٹریٹ پریشان ہوگیا وہ سمجھا کہ شاید جسٹس صاحب طنزیہ طور پر اس کو جسٹس ٹانگری کہہ رہے ہیں اب خیر نہیں
انگریز جسٹس نے کہا کہ  آپ نے بالکل ٹھیک کیا اچھا آرڈر کیا آپ نے ہم یہاں بیٹھے ہیں ہمیں دور دراز کے لوگوں کے حالات مسائل نہیں پتہ آپ وہاں موجود ہیں آپ نے اس علاقے کے حالات و واقعات کو سامنے رکھنے کے بعد بالکل ٹھیک حکم جاری کیا ہے
اس بات پر اس انگریز جسٹس نے مجسٹریٹ کی بہت حوصلہ افزائی کی

ہم کبھی کسی فرد کو نشانہ نہیں بناتے اور سسٹم میں بہتر تبدیلی کیلئے کوشاں ہیں  
  ایک مجسٹریٹ کا عہدہ اور اختیار چیف جسٹس سے بھی زیادہ ہے  اگر اس کو اپنے آدھے اختیارات کا بھی علم ہوجائےاگر ایک مجسٹریٹ مکمل لیڈرشپ کے ساتھ اپنے اختیارات کو استعمال کرے تو سارا معاملہ ہی ختم ہوجائے گا اور تھانہ کلچر کیوں ختم نہیں ہوگا؟
سوشل میڈیا پر اگر ہم کسی پر تنقید کرتے ہیں کسی عدالتی حکم نامے کو شرمناک قرار دیتے ہیں تو یہ ایک جرم ہے اور سائیبر کرائم ہے تو متاثرہ شخص کو چاہیئے کہ اس معاملے کو عدالت میں لے جائے اور ہمارے خلاف سایئبر کرائم کے تحت مقدمہ درج کروائے ہم ہمیشہ اس کے احسان مند رہیں گے اس معاملے پر اگر کوئی ہمارے ساتھ رعایت کرتا ہے تو وہ بھی مجرم ہے
صرف ایف آئی آر کی بنیاد پر جب مجسٹریٹ کے سامنے یہ شہادت پیش کی جاچکی ہو کہ ملزم بے گناہ ہے اور ملزم کے خلاف کوئی شہادت نہ ہو اور مجسٹریٹ ملزم کی بے گناہی کا خود گواہ بن گیا ہو تو ایسی صورت میں ایک مجسٹریٹ کو چاہیئے کہ وہ "جسٹس ٹانگری" بن جائے اور وہ ایک بااختیار انسان ہونے کا مظاہرہ کرے

چاہے کچھ بھی ہوجائے ہم اس معاملے کی تہہ تک ضرور جائیں گے وہ کیس لاء کس کے پاس موجود ہے جس کے تحت ایک بے گناہ انسان کو جیل بھیجنے کا قانونی جواز ہے