Monday, 24 November 2014

انگریزی زبان کا ایک لفظ اور اونٹ سے بڑے ساب

میں حیرت سے  آنکھ جھپکے بغیرعدالت میں موجود  اس اونٹ سے بڑے  شخص کو دیکھ رہا تھا اور سوچ رہا تھا کہ اس ادارے کی عظمت کو اکیس توپوں کی سلامی یہ اتنے بڑے  لوگ تلاش کیسے کرلیتا ہے جبکہ وہ اونٹ سے بڑا  ساب کورٹ کی فائل کے صفحات یوں الٹ پلٹ رہا تھا جیسے پہلے دن کوئی جونئیر وکیل کسی مقدمے کی فائل اٹھاتا ہے تو اس کو سمجھ نہیں آتی کہ وہ اس کو کیسے سمجھے کیسے اس کیس کا مطالعہ کرے
واقعہ یہ تھا کہ اس  کی غفلت سے تین بے قصور اور بے گناہ لوگ  جن میں ایک بوڑھی اور بیمار عورت  بھی شامل تھی ایک  کیس میں بری طرح فٹ کردیئے گئے تھے اور وہ جس کا  فکری  اور ذہنی قد کاٹھ اونٹ سے بھی کافی بڑا تھا یوں بے نیاز بیٹھا تھا جیسے کچھ ہوا ہی نہیں
میرا دعوٰی ایک دلیل کے ساتھ ہمیشہ سے یہی رہا ہے کہ صوبہ سندھ کی عدالتوں کے مجسٹریٹ سطح کی عدلیہ کی اکثریت پولیس کی ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت ہے عدلیہ کی انتظامیہ سے علیحدگی کا تاحال سب سے بڑا نقصان یہ ہوا ہے کہ پہلے پولیس والے اپنے ایک افسر کے سامنے پیش ہوتے تھے اور اب وہ اپنے ایک ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت کے سامنے پیش ہوتے ہیں اس کی وجہ صرف اور صرف نااہلوں کی وہ فوج ہے جو جمع کرلی گئی ہے یہ بے چارے نہیں جانتے کہ تفتیش کیا ہوتی ہے اور تفتیش کے دوران مجسٹریٹ کی ذمہ داری کیا ہے اور تفتیش مکمل ہونے کے بعد جب پولیس چالان لیکر آتی ہے تو اس چالان پر اپنی رائے کس طرح قائم کرنی ہے نہ تو ان کو ادارے نے کوئی تربیت دی ہے نہ وہ تربیت دینے کی کوکوئی ضرورت محسوس کرتے ہیں   میں پورے کراچی میں صرف دو مجسٹریٹ صاحبان کو جانتا ہوں جو کہ انتظامی حکم جاری کرنے سے پہلے پولیس فائل سکون سے پڑھتے ہیں مطالعہ کرتے ہیں اور ایک تفصیلی حکم نامہ  جاری کرتے ہیں اور اکثر اوقات وہ پولیس کی رائے سے اتفاق  نہیں کرتے جس کے نتیجے میں پولیس  کے فراڈ اور دھوکے سامنے آتے رہتے ہیں  کیونکہ وہ  نہ تو پولیس کے ذہنی غلام ہیں اور نہ ماتحت  اسی پریکٹس کے تحت انہوں نے سینکڑوں بے گناہوں کو پولیس کی حراست سے نکلوایا اسی پریکٹس ہی کے تحت کتنے ہی ملزمان کی ہتھکڑی کورٹ میں ہی کھلوادی گئی کہ کیس بنتا ہی نہیں  اصولی طور پر تمام عدالتی افسران کو یہ کام کرنا ہے ہوسکتا ہے کچھ اور لوگ بھی یہ نیک کام کرتے ہوں میرا واسطہ ان سے نہیں پڑا
تفتیش کے بعد مجسٹریٹ  انتظامی حکم کے زریعےکیس کی گرفت کرتا ہے اس پر آرڈر پاس کرتا ہے اس انتظامی آرڈر کی اہمیت کا  اندازہ آج تک ان نااہلوں کو ہو ہی نہیں سکا کہ یہ ہوتا کیا ہے  سپریم کورٹ  اور ہایئکورٹ نے  لاکھوں  صفحات ضائع کردیئے اس راز کو تلاش کرنے کیلئے کہ پولیس کی تفتیش مکمل ہوجانے کے بعد پولیس کا ادنٰی سا خادم اور ذہنی غلام اس پر جو حکم نامہ جاری کرتا ہے وہ ایک انتظامی نوعیت کا آرڈر ہے یا جوڈیشل آرڈر
قانون دانوں اور ججز کے ایک بہت بڑے گروہ کا یہ کہنا ہے کہ پولیس کی تفتیش پر مجسٹریٹ جو حکم جاری کرتا ہے اس کی نوعیت جوڈیشل ہے جبکہ  قانون دانوں اور وکلاء کی اکثریت اس پر اب متفق ہوچکی ہے یہ انتظامی نوعیت کا حکم ہے اور اس حکم کے خلاف اپیل بھی ہایئکورٹ میں ہوگی وہ بھی ایک آئینی پٹیشن کے زریعے لیکن تصویر کا دوسرا رخ یہ ہے کہ کیا ان کو وہ اہم ترین انتظامی آرڈر لکھنے آتا ہے اگر سپریم کورٹ اتنی بات سوچ لیتی تو وہ اس فضول بحث میں الجھنے کی بجائے اپنے عدالتی افسران کی تربیت کا انتظام ہی کرلیتی
اب ملاحظہ فرمائیں وہ واقعہ جس کے تحت عدالت میں تعینات  پوسٹ گریجویٹ اونٹ سے بڑے ساب  کو  میٹرک پاس پولیس والا کیسے ایک جج  کو  ماموں بناکر چلا گیا
واقعہ کچھ یہ تھا کہ ایک گھر کے اندر ہونے والے واقعہ کی ایف آئی آر درج کروائی گئی  ایک شخص نے ایف آئی آر درج کروائی کہ اس کی  بیوی اور بیٹوں نے اس کو پاگل خانے میں پاگل قرار دے کر داخل کروادیا تھا جس کے بعد اس کے رشتے داروں نے اس کو وہاں سے نکلوایا جس کے بعد جب وہ اپنے گھر آیا تو اس کے بیوی بچوں نے  اس پر تشدد کیا اور پستول دکھا کر جان سے مارنے کی کوشش کی جس کے بعد اس نے اپنی اسی گھر کی گراؤنڈ فلور پر رہایئش پذیر اپنی بیٹی  "ج" کے گھر پناہ لی تفتیش کے بعد اصل واقعہ یہ سامنے آیا کہ وہ شخص واقعی  پاگل ہے  اس کو نفسیاتی ہسپتال میں داخل کروایا گیا تھا علاج معالجے کیلئے اسی دوران اس کے رشتے دار اس کو وہاں سے زبردستی نکلوا کرلے گئے ڈاکٹر نے گواہی دی کہ یہ شخص خطرناک نفسیاتی مریض ہے اس کے علاوہ وہ اپنی جس بیٹی کے ساتھ گراؤنڈ فلور پر رہتا ہے اور اس نے اپنے بیان کے مطابق اس کے گھر پناہ لی تھی  اس نے بھی واقعہ سے لاعلمی کا اظہار کیا  جس کے بعد اس کیس کو  شواہد کے مطابق"اے کلاس" میں ختم کردیا گیا
دوبارہ تفتیش ہوئی پولیس نے رشوت مانگی ملزمان نے نہیں دی جس کے بعد پولیس افسر نے چالان پیش کردیا اور دوشناختی کارڈز کو گواہ بنایا ایک شناختی کارڈ نیو کراچی کا دوسرا شناختی کارڈ سیفل گوٹھ  کا ہے جن کا دعوٰی تھا  کہ وہ اس واقعے کے گواہ ہیں   سوال یہ ہے کہ وہ پہلے کیوں نہیں پیش ہوئے جب کہ ایک گلشن اقبال میں ہونے والے گھریلو جھگڑے کی گواہی نیوکراچی یا صفورا گھوٹھ کا رہایئشی کیسے دے سکتا ہے واقعہ کے گواہ اڑوس پڑوس کے لوگ ہوسکتے ہیں جبکہ حیرت ہے کہ وہ گواہ بننے کیلئے   گھر کے اندر داخل ہوکر فرسٹ فلور پر بھی چڑھ گئے سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ وہ  دو گواہ گھر کے فرسٹ فلور پر کیا کررہے تھے
حقیقت یہ ہے کہ تفتیشی افسر نے دوشناختی کارڈز کی فوٹو کاپیاں  پیدا کرکے دو چشم دید جعلی گواہ بنائے لیکن یہ وضاحت نہ کی کہ وہ ایف آئی آر درج ہونے کے آٹھ مہینے تک کہاں رہے شاید اس کو یہ بھی نہیں پتہ کہ شناختی کارڈ  کی فوٹو کاپی کو گواہ کیسے بنایا جاتا ہے
لیکن سب سے بڑا دھوکہ یہ دیا گیا کہ جس ڈاکٹر کی گواہی کی بنیاد پر کیس ختم کیا گیا تھا اس کو اس کیس کا مرکزی گواہ بنا لیا گیا حالانکہ اس نے اپنی  گواہی تبدیل نہیں  کیس کی فائل میں اس کا بیان موجود ہے کہ مدعی مقدمہ پاگل ہے  لیکن یہ فائل پڑھنے کی زحمت کون کرے گالیکن ایک  مجسٹریٹ کو کیا پتہ کہ پراسکیوشن کا گواہ کیا ہوتا ہے  ایک  مجسٹریٹ کو کیا پتہ کہ ایف آئی آر کیا ہوتی ہے ایک مجسٹریٹ  کو کیا پتہ کہ پولیس نے اہم ترین گواہ کو گواہ کیوں نہیں بنایا
پولیس نے چالان اپنے ذہنی غلام اور ذہنی ماتحت کے سامنے پیش کیا جس پر سندھ ہایئکورٹ کے مقرر کردہ مجسٹریٹ نے صرف ایک انگریزی زبان کا لفظ لکھا "رجسٹرڈ" اور پولیس کی تفتیش سے  مکمل اتفاق کرلیا سوال یہ تھا جو کہ اب ہمارا مطالبہ بھی بن چکا ہے کہ اگر انگریزی زبان کا ایک لفظ لکھنا ہی انتظامی حکم ہے تو اس کیلئے کسی پوسٹ گریجویٹ کی خدمات لینے کی ضرورت کیا ہے کورٹ کا ایک چپراسی مقرر کردیا جائے کافی ہے کیونکہ یہاں چپراسی بھی میٹرک پاس  ہے وہ بھی انگریزی زبان کا ایک لفظ لکھ سکتا ہے
میں نے جب اس ساب کی توجہ اس جانب دلائی تو اونٹ سے بڑے اس  ساب نے کورٹ کی فائل کے صفحات کے صفحے یوں الٹنے پلٹنے شروع کردیئے جیسے کہ  اداکارہ میرا کا نکاح نامہ غلطی سے فائل میں آگیا ہو  "ادھر ادھر "کی باتوں کے بعد میں نے پوچھا کہ آپ نے پڑھے بغیر ہی سوچے سمجھے بغیر ہی   اتنا اہم ترین انتظامی حکم نامہ دستخط کردیا ہے اور پولیس والا اونٹ سے بڑے  ساب کو "ماموں "بناکر چلا گیا
اب ہوگا کیا کیس چلے گا گواہ نہیں ملیں گے ڈاکٹر آئے گا گواہی دے گا جس کے بعد کیس ختم
آپ نے اکثر دیکھا ہوگا کہ ہماری سپریم کورٹ کے جسٹس صاحبان "ناناپاٹیکر" کی طرح ڈایئلاگ مارنے کے شوقین ہیں وہ اپنا تاریخی ڈائیلاگ مارتے ہیں کہ پولیس کی غلط تفتیش کے نتیجے میں ملزمان بری ہوجاتے ہیں  اور ہمارے اخبارات اس کی شہہ سرخیاں لگاتے ہیں جیسے کسی چرسی بابے نے کوئی راز کی بات بتادی ہو یا کوئی سٹے کا نمبر بتادیا ہو حقیقت یہ ہے ہماری سپریم کورٹ اور ہایئکورٹ کے جسٹس  صاحبان حقیقت سے نظریں چرا کرجھوٹ  بولتے ہیں  اور عوام کو دھوکہ دیتے ہیں وہ اپنے ادارے میں موجود اونٹ سے بڑے  دانشوروں کی نااہلی کا اعتراف کرنا نہیں چاہتے جن کی نااہلی کی وجہ سے پولیس چالان منظور کروالیتی ہے جس کی وجہ سے پولیس بے گناہوں کو  جھوٹے کیس میں پھنسالیتی ہے پولیس ایک عام شہری پر جو بھی تشدد کرتی ہے اس کی ذمہ دار وہ عدلیہ جس کے متعلق دعوٰی کیا جاتا ہے کہ پاکستان میں ایک آزاد عدلیہ موجود ہے جی ہاں عدلیہ مکمل آزاد ہے لیکن  یہ آزادی عدلیہ نے پولیس کو دے رکھی ہے کہ جس کو چاہے جس کیس میں چاہے اٹھا کر فٹ کردے
سپریم کورٹ اور ہایئکورٹ کی اوقات کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ وہ گزشتہ  ستاسٹھ سال سے حکم نامے جاری کررہی ہے کہ انتظامی حکم اسپیکنگ ہونا چاہیئے اور جانچ پڑتال کے بعد جاری کرنا چاہیئے جبکہ آج تک وہ اپنی ماتحت عدلیہ سے یہ بات نہیں منوا سکے کہ وہ انتظامی حکم اسپیکنگ نوعیت کا لکھیں کہ وہ کونسی وجوہات ہیں جن کی بنیاد پر وہ پولیس کی تفتیش سے اتفاق کرکے کیس کو سماعت کیلئے منظور کرتے ہیں  آج بھی اکیسویں صدی کے اس دور میں  ہم اونٹ سے بڑے  سابوں  سے انصاف کی توقع رکھتے ہیں  جو کہ انگریزی زبان کے ایک لفظ کے زریعے  کسی کے بھی مستقبل سے کھیل سکتے ہیں ہم ہایئکورٹ سے اب کبھی بھی یہ نہیں کہیں گے کہ وہ اس سلسلے کو روکیں کیوں روکا جائے اس ملک کے  غریب آدمی کو اوقات میں رکھنے کیلئے ضروری ہے کہ اس پر پولیس مسلط کی جائے اس کو پولیس کے زریعے ذلیل کیا جائے شاید عدلیہ کی خواہش ہے کہ پولیس  غریب لوگوں کو جھوٹے کیسز میں پھنسائے یہی وجہ ہے کہ صرف انگلش زبان کا ایک لفظ لکھ کر ہمارے عدالتی افسران پولیس کے فراڈ کو پولیس کے دھوکے کو تحفظ فراہم کرتے ہیں  ہم ہایئکورٹ سے  مطالبہ کرتے ہیں کہ  وہ اپنا مشن جاری و ساری رکھے لیکن خدا کے واسطے انتظامی حکم کا عدالتی اختیار  اونٹ سے بڑے ان سابوں سے لیکرکورٹ کے چپراسیوں کو دے دیا جائے کورٹ کے پٹے والوں کو دے دیا جائے وہ بھی میٹرک پاس ہیں انگلش کا ایک لفظ لکھ ہی لیں گے
اسی طرح ہم چیف جسٹس سندھ ہایئکورٹ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ سندھ جوڈیشل اکیڈمی کو فوری طور ختم کرنے کا اعلان کرکے وہاں کوئی  ڈھنگ کا شاپنگ سینٹر بنادیں   یا وہاں کوئی  بریانی  کی دکان کھول دی جائے یہ ججز کی تربیت کا ڈھکوسلہ ختم کیا جائےلعنت ہے اس  جوڈیشل اکیڈیمی پر جو  ججز کو ایک انتظامی حکم نامہ لکھنا نہ سکھا سکے

وہ وقت دور نہیں جب لوگ عدلیہ کے خلاف تشدد کا راستہ اختیار کرنے پر مجبور ہوجائیں گے 

Tuesday, 4 November 2014

ایک ممبر سندھ بار کونسل کا انٹرویو


سندھ بارکونسل کی کارکردگی کے حوالے سے اگر بات کی جائے تو یہ بات سامنے آجاتی ہے کہ ممبران نے نااہلی کے تمام ہی ریکارڈ توڑڈالے ہیں اس کارکردگی کے بعد شرم وحیا کا تقاضا یہ تھا کہ سابق ممبران دوبارہ بار کا رخ ہی نہیں کرتے لیکن کیا کیا جائے کہ سندھ بارکونسل کے وسائل لوٹنے کھسوٹنے کے بعد جب کسی احتساب کا خوف بھی نہ ہو  اور پانچ سال تک اقتدار کے مزے لوٹنے کے بعدیہ سندھ بار کونسل  کی  حکمرانی بھی ایک ایسا نشہ بن چکی ہے کہ بقول شاعر ” چھٹتی نہیں ہے منہ سے یہ کافر لگی ہوئی“یہی وجہ کہ وہ تمام نااہل افراد ایک بار پھر سندھ بار کونسل میں نہ صرف ڈھٹائی سے حصہ لے رہے ہیں بلکہ اپنی نااہلی کا بھی سرعام دفاع کررہے ہیں اسی حوالے سے حقائق جاننے کیلئے ہم نے ایک  ممبر سندھ بارکونسل سے ملاقات کا وقت لیا  اور ان کے خیالات جاننے کی کوشش کی

 سندھ بار کی کارکردگی کے حوالے سے آپ کیا کہیں گے؟


سب سے پہلی بات تو یہ ہے کہ میں ایک انتہائی مصروف ترین وکیل ہوں اور سند ھ بار کونسل  کےالیکشن میں حصہ لیکر میں اپنا قیمتی وقت وکلاء برادری کیلئے وقف کرتا ہوں لیکن افسوس کہ ان وکیلوں کو میری قدر ہی نہیں ہرجگہ ہماری کارکردگی کا ڈھنڈورا ہی پیٹتے رہتے ہیں ذرا سا دانت پیس کر یہ جو نوجوان وکیل باتیں کرتے پھر رہے ہیں ان کا حقائق سے کوئی تعلق نہیں ہے  حقیقت یہ ہے کہ یہ میرا ایک سندھ بار کونسل اور وکلاء پر احسان ہے کہ میں اپنا قیمتی وقت ان کو دیتا ہوں وکلاء کا مجھ پر کوئی بھی احسان نہیں  جناب شاید آپ میرا سوال سمجھ نہیں سکے میں نے سندھ بار کونسل کاکردگی کے حوالے سے سوال کیا تھا؟ جب تک آپ وکیل لوگ میرا یہ احسان تسلیم نہیں کرتے  کہ میں اپنی پروفیشنل مصروفیات میں سے اپنا قیمتی وقت نکال کر سندھ بار کونسل کو اپنا انتہائی قیمتی وقت دیتا ہوں  اس وقت تک میں کیا جواب دے سکتا ہوں 

 آپ نے گزشتہ الیکشن میں بھی وعدہ کیا تھا کہ وکلاء کیلئے عالمی معیار کا رہایئشی ہاسٹل اور اسپتال بنایا جائے گا اس وعدے کا کیا ہوگا؟

میری مصروفیات میری وکالت میرا کام اتنی  بڑی لاء فرم چلانا کوئ بچوں کا کھیل نہیں آپ ابھی بھی انتظار گاہ میں جاکر دیکھیں میرے کلایئنٹس کا رش لگا ہوا ہے یہ میری کل کی ڈائری دیکھیں کل بھی بے شمار کیسز لگے ہوئے ہیں اس کے باوجود میں نے سندھ بارکونسل کو ٹائم دیا اور میں وعدہ کرتا ہوں کہ اس بار منتخب ہوکر یہ کام بھی کرہی دوں گا ویسے شہر میں اچھے ہوٹل اور اچھے اسپتالوں کی کوئی کمی نہیں اگر کسی کو ایڈریس پتا نہ ہوتو میں بتادوں گا

 سندھ بار کونسل  حکومت کی مالی امداد کیوں نہیں قبول کرتی؟

یہ الزام درست نہیں اگر ہم چاہیں تو ایک سال میں ہاسٹل بھی بن جائیں گے اسپتال بھی بن جائیں گےوکلاء کیلئے اعلٰی معیار کے کلب بھی بن جائیں گےمیڈیکل فنڈ میں بھی اضافہ ہوجائے گااور وکلاء کے بینوویلنٹ فنڈ میں بھی اضافہ ہوجائے گا لیکن ہم حکومت کا احسان نہیں لینا چاہتےاسی وجہ سے ہم حکومت کی امداد قبول نہیں کرتےایک صدر پاکستان نے پانچ کروڑ کے ابتدائی پیکیج کا اعلان کیا تھا اور شرط صرف اتنی رکھی تھی کہ ہم ایوان صدر سے آکر یہ چیک لیجائیں لیکن ہم نے کہا کہ آپ بزریعہ ڈاک پانچ کروڑ کا چیک بھجوادیں جس پر صدر صاحب برا مان گئےویسے بھی مجھے نہ تو اسپتال کی کوئی ضرورت ہے اور نہ ہی ہاسٹل کی اللہ کا شکر ہے کہ میرا اور میرے بچوں کا علاج  عالمی معیارکے اسپتالوں میں ہوتا ہے جبکہ میں ہمیشہ فائیو اسٹار ہوٹلوں میں ٹہرتا ہوں اگر وکلاء کیلئے ہاسٹل بن بھی جائے گا تو کونسا انقلاب آجائے گا

سوال: آپ کے آئیندہ کیا منصوبہ جات ہیں آپ کس بنیاد پر الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں؟

ممبر سندھ بار مسکرا کر جب تک بریانی کی ایک پلیٹ کے بدلے ووٹ کا سودا کرنے والے وکلاء موجود ہیں  اور لائن میں لگ کر  ذلت آمیز طریقے سےاپنے بار کے کارڈ کی فوٹو کاپی جمع کروا کرسو سوروپے کی ڈائری لیکر ووٹ ڈالنے والے لوگ موجود ہیں مجھے کسی کواپنا پروگرام دینے کی کوئی ضرورت نہیں میں سالانہ پانچ سو وکلاء کیلئے ڈنر کا اہتمام کرتا ہوں کیا یہ سب  وکیل میرے چاچے لگتے ہیں  یا میرے مامے لگتے ہیں  یہ سب جانتے ہیں کہ میں ان  کو کیوں ڈنر کھلاتا ہوں  کیا میرا دماغ خراب ہے یا میرے سر پر دوعدد سینگ آپ کو نظر آرہے ہیں وکیلوں سے صاف صاف کہتا ہوں میرا نہ پچیس سال پہلے کوئی پروگرام تھا نہ آج ہے جس نے جو مہم چلانی ہے شوق سے جاکر چلالےمیں گزشتہ پچیس سال سے ممبر سندھ بار کونسل بن رہاہوں اور اگلے پچیس سال بھی بنتا رہوں گا  میں دعوے سے کہتا ہوں کہ وہ وکلاء جو گزشتہ پچیس سال سے ایک کورٹ کی ڈائری اور بریانی کی ایک پلیٹ کے بدلے مجھے ووٹ دے رہے ہیں  وہ اس بار بھی مجھے مایوس نہیں کریں گے ویسے بھی مایوسی کفر ہے

تبدیلی کے نعرے کے حوالے سے آپ کیا کہتے ہیں ؟

اس نعرے کی بھاری قیمت لیڈرشپ کو ادا کرنی ہوگی نئی لائیبریری بنالینا بار کی تزئین و آرائش کروالیناسیکورٹی بہتر بنالینا نادرا کا ویریفیکیشن سینٹر بنالینا کونسی تبدیلی ہے  ،کار پارکنگ بنالینا کونسی تبدیلی ہے یہ سب تو میرے ایک منٹ کے کام تھے لیکن میں نے کیئے نہیں

 آخر کیوں نہیں کیئے کوئی وجہ تو ہوگی؟

میں نے اس لیئے کوئی کام نہیں کیا کیونکہ یہ وکیل لوگ اس قابل ہی نہیں اب آپ ہی بتائیں  ڈسٹرکٹ کورٹ کے وکلاء کا کتابوں کے مطالعے سے کیا لینا دینا پہلے مطالبہ تھا لائیبریری بنادو وہ بن گئی تو مطالبات آگئے کہ نئی کتابیں  بھی چاہیئں اب کچھ لوگ کہہ رہے ہیں کہ کورٹس میں لفٹ لگا دو پارکنگ کے بعد اب کچھ تبدیلی کے علمبردار یہ کہہ رہے ہیں میڈیکل کے فنڈ میں اضافہ کردو پھر کچھ لوگ آجائیں گے جو یہ کہیں گے بینوویلنٹ فنڈ میں اضافہ کردو ان وکیلوں کا سر پر نہ چڑھاؤ اگر یہ سرپر چڑھ گئے تو پھر یہ اتریں گے نہیں پرانا فارمولہ ہے سال میں ایک بار بریانی  کی ایک پلیٹ ہاتھ میں پکڑادو اور ایک مفت کی ڈائری بس کام ہوگیا پھر کل ایک نئی قوم آجائے گی جو کہے گی کہ وکلاء کیلئے پروفیشنل رہنمائی کا اہتمام کیا جائےیہ جولوگ نوجوانوں کو اکسا کر سر چڑھا رہے ہیں کل وہ خود پچھتائیں گے  آج جو میرے بھائی اور سیاسی نابالغ نوجوانوں کو پرانی لیڈرشپ کے خلاف ورغلاء رہے ہیں ان کو ایک نہ ایک دن خود پچھتانا ہوگااگر یہ نوجوان ووٹر بیدار ہوگئے تو یہ معاملہ دور تک نکل جائے گااور اگر ایک بار ان کے چند مطالبات مان لیئے گئے تو نئے مطالبات کی لسٹ تیار ہوجائے گی پھر ایک پینڈورا بکس تیار ہوجائے گا جس کو بند کرناناممکن ہوگاکل یہی وکیل آپ دیکھیں گے کہ کسی نظریئے کی بنیاد پر سندھ بار کا الیکشن لڑرہے ہونگےوکیل مطالبات لیکر آجائیں گے کہ یہ کام کردو وہ کردو ماحول خراب ہوجائے گا


بار کی ہڑتال کےخاتمے کیلئے آپ نے کوئی کوشش کی دیکھیں اس سے عوام کو کتنی تکلیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟


ممبر سندھ بار مسکرا کر دیکھا بلی آگئی نہ تھیلے سے باہر بار کی ہڑتال ہی تو ہماری اصل طاقت ہےاگر ہم عدالتیں بند نہ کروائیں تو چیف جسٹس اور اعلٰی عدلیہ ہمیں لفٹ کیوں کروائے گی اور ہمارے مطالبات کیوں تسلیم کرے گی یہی وجہ ہے کہ کوئی بھی  مسئلہ ہو ہم عدالتیں فوری بند کروادیتے ہیں  عوام جائیں بھاڑ میں اور عام وکیل جائے تیل لینے ہمیں کوئ فرق نہیں پڑتاہم بار کی ہڑتالیں جاری رکھیں گے اور جو ان ہڑتالوں کے خلاف آواز اٹھائے گا اس کا ٹینٹوا دبا دیں گے  اگر مہینے میں پانچ دن ہڑتال کے چکر میں عدالتیں بند پڑی رہیں تو کوئی فرق نہیں پڑتا اور اب تو یہ ہڑتال والی بیماری ہم سندھ ہایئکورٹ میں بھی لے آئے ہیں   

کیا ان بے وجہ کی ہڑتالوں سے وکلاء کے کوئی مسائل بھی حل ہوئے ہیں؟

ہمارا مسائل کے حل سے کیا لینا دینا اور اگر وکلاء کے مسائل حل ہوگئے تو ایک بریانی کی پلیٹ اور لائن میں سوروپے کی ڈائری کیلئے لائن میں لگ کر ہمیں ووٹ کون دے گا؟ اس سوال کا مجھے آپ جواب دے دیں

آپ کے ممبران سندھ بار کونسل پر ایک الزام یہ بھی ہے کہ آپ نے عدلیہ کو دور جدید کے تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کیلئے کوئی کردار ادا نہیں کیا عدالتی اصلاحات کیلئے کوئی کوشش نہیں کی ؟

یہ الزام درست نہیں لیکن عدالتی اصلاحات ایک ڈھکوسلہ ہیں اور ہم بلاوجہ کے ڈھکوسلوں   پر یقین نہیں رکھتے

نوجوان وکلاء کے نام کوئی پیغام ؟

خبردار ان کم بخت نوجوان وکلاء کا نام بھی میرے سامنے مت لیںکم بخت نگوڑے کہیں کے ان کم بخت سیاسی نابالغوں نے آخری عمر میں ہمیں ذلیل کرکے رکھ دیا ہے اب بلاوجہ بار میں جاکر وضاحتیں پیش کرنا پڑتی ہیں   ہم نے پچھلے پانچ سال اگر ٹکے کا کام نہیں کیا تو کونسا کفر ہوگیا یہ تو ہمیں یوں ذلیل کرتے پھر رہے ہیں جیسے  ہم نے کوئی بہت بڑا جرم کردیا ہے حالانکہ پچھلے پچیس سال میں سندھ بار کونسل نے کوئی کام نہیں کیا سندھ  بار کی یہ روایت  ہی نہیں کہ ہم کوئی کام کریں کل چند نوجوانوں کو مفت ڈائری دی لینے سے انکار کردیا کیا زمانہ آگیا ہے  لیکن اس بار مجھے ممبر بن جانے دیں ان کا علاج ضرور کروں گا کم بختوں کا یہ وہ بچے ہیں جو اس فلسفے پر یقین رکھتے ہیں کہ نہ کھیڈاں  گے نہ کھیڈن دیاں گے