Friday, 10 June 2016

یہی چراغ جلیں گے تو روشنی ہوگی تحریر صفی الدین اعوان

گزشتہ دنوں  کراچی شہر کے ایک جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے اتوار کے دن قتل کے مقدمے کا ایک ریمانڈ پیش کیا گیا تفتیشی افسر ایک اندھے قتل کی تفتیش کررہا تھا اور دو گرفتار ملزمان کا وہ دودفعہ ریمانڈ لے چکا تھا  اور وہ  تیسری بار ریمانڈ لینے آیا تو جوڈیشل مجسٹریٹ  نے مقدمے کی تفصیلات بتائیں تو کراچی کے بادشاہ تفتیشی افسر نے روایتی انداز میں ٹالنے کی کوشش کرتے ہوئے بتایا کہ قتل کا مقدمہ ہے آپ تو ویسے بھی مجسٹریٹ ہو یہ تو ویسے بھی بھی سیشن ٹرائل ہے مجسٹریٹ کی عدالت کا تو ٹرائل ہی نہیں ہے آپ اس میں زیادہ مداخلت مت کریں  اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہ قتل کی ایف آئی آر ہے جو درخت کے ساتھ بھی باندھ دی جائے تو درخت  سوکھ جاتا ہے  ویسے بھی آپ ڈیوٹی مجسٹریٹ ہو یہ آپ کی ذمہ داری بھی نہیں ہے
تفتیشی افسر کی بدقسمتی اور ملزم کی خوش قسمتی کے مجسٹریٹ صاحب صاحب علم تھے میرٹ پر ان کا تقرر ہوا تھا اور مجسٹریٹ کے اختیارات کے متعلق ان کو علم تھا
مجسٹریٹ صاحب نے ریمانڈ پیپر ایک طرف کیئے اور کہا کہ ملزمان کے خلاف آپ نے کیا شواہد جمع کیئے ہیں کتنے گواہوں کے بیان ریکارڈ کیئے ہیں اور ملزمان کے خلاف  کتنے گواہ موجود ہیں
تفتیشی افسر کی ایک ہی رٹ تھی کہ  تفتیش چل رہی ہے  قتل کی ایف آئی آر ہے  اس مسئلے پر چھیڑخانی نہ کریں جس طریقے سے ہمیشہ مجسٹریٹ صاحبان اڑی کیئے بغیر  ریمانڈ دے دیتے ہیں آپ بھی دے دیں  ٹرائل کورٹ میں سب ثابت ہوجائے گا  ویسے بھی یہ قتل کا مقدمہ ہے خیر جوڈیشل مجسٹریٹ نے تمام شواہد کا مطالعہ کرنے کے بعد ملزم کی رہائی کا حکم دیا
اگرچہ یہ ایک مجسٹریٹ کا ایک انفرادی فعل ہے یہ بھی حقیقت ہے کہ   یہی چراغ  جلیں گے تو روشنی ہوگی   کراچی جیسے شہر میں کسی مجسٹریٹ نے تو یہ ہمت کی کہ تفتیشی افسران اور پولیس کے سامنے سرجھکاکر کام کرنے کی بجائے ان کی رائے سے اختلاف کرنے کی جرات کی
میں یہ بات دعوے سے کہتا ہوں کہ اگر جوڈیشل مجسٹریٹ کی سیٹ پر میرٹ پر لوگ بٹھا دیئے جائیں  تو  پورے سندھ سے   آدھے مقدمات خود ہی ختم ہوجائیں گے    کسی پولیس والے کو ہمت نہیں ہوگی کہ کسی بے گناہ کو کسی جھوٹے مقدمے میں نامزد  کرکے جیل کی سلاخوں کے پیچھے دھکیل کر کسی  کا مستقبل تباہ نہیں کرسکے گا  اور نتیجہ یہی نکلے گا کہ جس کے خلاف پولیس چالان منظور ہوگا وہ سزا سے نہیں بچ سکے گا ایسے فضول ٹرائل کا کیا فائدہ جس کے اختتام پر ملزم کو باعزت بری کردیا جائے خراج تحسین ہے اس جوڈیشل مجسٹریٹ کو جس نے پولیس  افسر کی رائے سے اختلاف کیا     اس کیس کے حالات واقعات اور دیگر شواہد بعض وجوہات کی  
بنیاد پر تبدیل کرکے آپ کے سامنے کورٹ آرڈر کی ایک جھلک مندرجہ ذیل ہے



S.I-P Muhammad Feeroz Khan of New Karachi Industrial. Area has produced custody of accused  Murtaza Ali @ Sajid in a blind FIR for grant of 3rd time police custody remand.

2.         Heard I.O, in person and perused the record.

3.         The I.O submits that on 10.08.2012, complainant Asghar Baloch registered FIR against unknown persons which remained under investigation, but neither I.O could arrest any accused nor submitted interim challan. Further he submits that accused Murtaza Ali @ Sajid was arrested by police of Sir Syed in another case and on 26.08.2012, he without collecting any evidence against accused in any form made his arrest in this case and produced him for remand. The court has granted police custody remand till today but neither he could collect any evidence nor record statement U/s 161 Cr.P.C of any witness till today. He has given such statement in writing that still he could not collect evidence against accused but want to get legalized detention of accused from the court U/s 167 Cr.P.C.

4.         Under the law, one can not be arrested without any evidence, reasonable suspicion or justifiable ground. The I.O namely Feeroz Khan has devil daringly arrested person in a blind FIR without collecting any evidence. Not only accused has been arrested without any justifiable ground but since 26.08.2012, the I.O has not collected any evidence in any form even hearsay evidence but he want to get detention legalize U/s 167 Cr.P.C. Such act of police is prime facie illegal and is in contravention of guaranteed constitutional rights. The liberty of a citizen is precious. One cannot be deprived by the law enforcers even for one hour without justifiable reasons. The conduct of SIP Feroze Khan shows that he has changed his status from law enforcer to law breaker, therefore, he is warned to be careful in future and safeguard the fundamental rights of citizens.

5.         With above observations, the application under section 167 Cr.PC. merits no consideration which stand rejected. I.O is directed to release accused at liberty in this case on taking bond for sum of Rs: 1,00,000.00 if any tangible evidence comes against accused, such report may be made to the court for appropriate orders.
           
Announced in open court.

Given under my hand and seal o f this court, this the 3rd day of September, 2012.

            میں صرف یہی کہوں گا کہ یہی چراغ جلیں گے تو روشنی  ہوگی  امید ہے باقی ججز بھی پولیس کی رائے سے اختلاف کرکے روایات کو بدل دیں دے گے 

صفی الدین  اعوان 
03343093302
Post a Comment