Friday, 10 June 2016

یہ بات اتنی سادہ نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تحریر صفی الدین اعوان


بظاہر یہ بات  بہت سادہ محسوس ہوتی ہے
لیکن میں نے اپنے پورے کیریئر میں صرف ایک آدھ جو ڈیشل مجسٹریٹ ہی کو پولیس افسران کے سامنے  بات کرتے ہوئے اور ان کی رائے سے اختلاف کرتے ہوئے دیکھا ہے آج بھی بہت سے لوگوں کا مؤقف ہے کہ تفتیش کے دوران مجسٹریٹ کا کوئی اختیار نہیں ہے زیرنظر کورٹ آرڈر میں نا صرف جوڈیشل مجسٹریٹ نے پولیس آفیسر کو ریمانڈ دینے سے انکار کیا بلکہ  شاید کراچی کی ڈسٹرکٹ کورٹس کی ہسٹری میں پہلی  بار کسی جوڈیشل مجسٹریٹ نے یہ ہمت کی ہوگی کہ  نہ صرف پولیس افسر کو ریمانڈ دینے سے واضح انکار کیا بلکہ واضح کردیا کہ شہادت  گواہی اور کسی ثبوت کے بغیر کسی ملزم کے خلاف ریمانڈ دینے کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا  مزید یہ کہ تفتیشی افسر کے خلاف جرمانہ عائد کیا کیونکہ اس نے ایک بے گناہ انسان کو  بلاوجہ حراست  میں بھی رکھا تھا

اگرچہ  یہ بات بہت سادہ محسوس ہوتی ہے لیکن یوں محسوس ہوتا کہ مجسٹریٹ کے اختیارات کہیں گم ہوگئے ہیں  جتنی فرمانبردار ی سے ہمارے اکثر دوست پولیس افسران کے سامنے بیٹھے ہوتے ہیں  آج ایک جوڈیشل مجسٹریٹ کو  پولیس کے خلاف ایکشن لیتے ہوئے دیکھا تو دل کو یہ خوشی ہوئی کہ موجودہ حالات میں کوئی تو ہے  جو بغاوت کررہا ہے  جو نوکری جانے کی پرواہ نہیں کرتا
خوشی ہوتی ہے کہ کوئی تو ہے جو عبادت کے اس عظیم شعبے کو  نوکری نہیں سمجھتا

یہی چراغ  جلیں گے تو روشنی  ہوگی
بے نشانوں کا نشاں مٹتا  نہیں مٹتے مٹتے نام ہو ہی جائے گا
A.SI-P Islam Lodhi has arrested accused Rehan S/o Meraj Ahmed in FIR No: 196/2011, U/s 392 PPC. The FIR is blind, and; as per I.O same had already been disposed of under “A” class. According to him, he has arrested accused on 04.05.2012, suspiciously and till today he has not collected any evidence against the accused! On the application of remand, the I.O was ordered in writing to produce evidence, if any, collected by him against the accused till moment. In compliance whereof he has given statement in writing that still he has not collected any evidence against the accused.

Under the law, police officer is not authorized to arrest any person without reasonable suspicion, justifiable reason,  credible information & sufficient evidence. In this case,  A.SI-P Islam Lodhi has devil daringly arrested a person and has kept him under illegal confinement from the date of his arrest. Even after his illegal arrest, he did not bother to record statement or collect evidence of any person against the accused. Such conduct of police clearly shows that ASIP Islam Lodhi has acted in contravention of guaranteed constitutional rights, therefore, his application under section 167 Cr.P.C  is dismissed. The accused is ordered to be released immediately. The I.O ASIP Islam Lodhi is saddled with fine of Rs: 10,000.00 to be paid by him within seven days to the accused. Let the copy of this order be sent to SSP Karachi Central for placing this order in the personal file of I.O. ASIP Islam Lodhi. The accused is at liberty to initiate criminal proceedings for his illegal confinement if he desire so.
Pronounced in the open Court.

Given under my hand and seal of this Court this 05th day of May 2012.
Post a Comment