Saturday, 16 November 2013

مذہبی جلوسوں کے پرمٹ منسوخ کرکے تمام مذہبی جلوس شہر سے باہر منعقد کیئے جایئں لاء سوسائٹی پاکستان

مذہبی جلوسوں کے پرمٹ منسوخ کرکے تمام مذہبی جلوس شہر سے باہر منعقد کیئے جایئں ہنستے بستے بازاروں میں صرف مخالف فرقے کی دکانوں اور کاروباری مراکز کو آگ لگانا ہر گز غلطی نہیں جس طرح چند سال قبل کراچی کے قدیم مارکیٹیں جلا کر راکھ کی گئیں تھیں ان کے متاثرین آج تک زندہ درگور ہیں آج راولپنڈی کے زندہ درگور ہوگئے  کل کسی اور شہر کے بازار کو جلادیا جائے گا
وہ علماء جو اپنے مزہبی کارکنان کے جزبات کو کنٹرول نہیں کرسکتے ان کو شہر کے مصروف بازار میں جلوس نکالنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی غیر منظم ہجوم  جس پر منتظمین کا کوئی کنٹرول نہیں ہوتا  مصروف بازار سے جلوس نکالنے کی اجازت دینا کراچی اور راولپنڈی کے واقعات کے بعد ایک جرم تصور کیا جارہا ہےان کو شہر سے منتقل کیا جائے 
پنجاب کی صورتحال مزید خراب ہوگی مزہبی جنونی کسی کے قابو میں نہیں  
آرہے 
پاکستان شاید ایک نئے بحران کی طرف بڑھ رہا ہے
Post a Comment